قرآن حکیم            

مکمل سورت
سورت نمبر
آیت نمبر
ایک آیت
(75) سورۃ القیامۃ (مکی، آیات 40)
بِسْمِ اللّـٰهِ الرَّحْـمٰنِ الرَّحِيْـمِ
لَآ اُقْسِمُ بِيَوْمِ الْقِيَامَةِ (1)
قیامت کے دن کی قسم ہے۔
وَلَآ اُقْسِمُ بِالنَّفْسِ اللَّوَّامَةِ (2)
اور پشیمان ہونے والے شخص کی قسم ہے۔
اَيَحْسَبُ الْاِنْسَانُ اَلَّنْ نَّجْـمَعَ عِظَامَهٝ (3)
کیا انسان سمجھتا ہے کہ ہم اس کی ہڈیاں جمع نہ کریں گے۔
بَلٰى قَادِرِيْنَ عَلٰٓى اَنْ نُّسَوِّىَ بَنَانَهٝ (4)
ہاں ہم تو اس پر قادر ہیں کہ اس کی پور پور درست کر دیں۔
بَلْ يُرِيْدُ الْاِنْسَانُ لِيَفْجُرَ اَمَامَهٝ (5)
بلکہ انسان تو چاہتا ہے کہ آئندہ بھی نافرمانی کرتا رہے۔
يَسْاَلُ اَيَّانَ يَوْمُ الْقِيَامَةِ (6)
پوچھتا ہےکہ قیامت کا دن کب ہوگا۔
فَاِذَا بَرِقَ الْبَصَرُ (7)
پس جب آنکھیں چندھیا جائیں گی۔
وَخَسَفَ الْقَمَرُ (8)
اور چاند بے نور ہو جائے گا۔
وَجُـمِــعَ الشَّمْسُ وَالْقَمَرُ (9)
اور سورج اور چاند اکھٹے کیے جائیں گے۔
يَقُوْلُ الْاِنْسَانُ يَوْمَئِذٍ اَيْنَ الْمَفَرُّ (10)
اس دن انسان کہے گا کہ بھاگنے کی جگہ کہاں ہے۔
كَلَّا لَا وَزَرَ (11)
ہرگز نہیں کہیں پناہ نہیں۔
اِلٰى رَبِّكَ يَوْمَئِذٍ ِۨالْمُسْتَقَرُّ (12)
اس دن آپ کے رب ہی کی طرف ٹھکانہ ہے۔
يُنَبَّاُ الْاِنْسَانُ يَوْمَئِذٍ بِمَا قَدَّمَ وَاَخَّرَ (13)
اس دن انسان کو بتا دیا جائے گا کہ وہ کیا لایا اور کیا چھوڑ آیا۔
بَلِ الْاِنْسَانُ عَلٰى نَفْسِهٖ بَصِيْـرَةٌ (14)
بلکہ انسان اپنے اوپر خود شاہد ہے۔
وَلَوْ اَلْقٰى مَعَاذِيْـرَهُ (15)
گو وہ کتنے ہی بہانے پیش کرے۔
لَا تُحَرِّكْ بِهٖ لِسَانَكَ لِتَعْجَلَ بِهٖ (16)
آپ (وحی ختم ہونے سے پہلے) قرآن پر اپنی زبان نہ ہلایا کیجیے تاکہ آپ اسے جلدی جلدی (یاد کر) لیں۔
اِنَّ عَلَيْنَا جَمْعَهٝ وَقُرْاٰنَهٝ (17)
بے شک اس کا جمع کرنا اور پڑھا دینا ہمارے ذمہ ہے۔
فَاِذَا قَرَاْنَاهُ فَاتَّبِــعْ قُرْاٰنَهٝ (18)
پھر جب ہم اس کی قراءت کر چکیں تو اس کی قراءت کا اتباع کیجیے۔
ثُـمَّ اِنَّ عَلَيْنَا بَيَانَهٝ (19)
پھر بے شک اس کا کھول کر بیان کرنا ہمارے ذمہ ہے۔
كَلَّا بَلْ تُحِبُّوْنَ الْعَاجِلَةَ (20)
ہرگز نہیں بلکہ تم تو دنیا کو چاہتے ہو۔
وَتَذَرُوْنَ الْاٰخِرَةَ (21)
اور آخرت کو چھوڑتے ہو۔
وُجُوْهٌ يَّوْمَئِذٍ نَّاضِرَةٌ (22)
کئی چہرے اس دن تر و تازہ ہوں گے۔
اِلٰى رَبِّهَا نَاظِرَةٌ (23)
اپنے رب کی طرف دیکھتے ہوں گے۔
وَوُجُوْهٌ يَّوْمَئِذٍ بَاسِرَةٌ (24)
اور کتنے چہرے اس دن اداس ہوں گے۔
تَظُنُّ اَنْ يُّفْعَلَ بِـهَا فَاقِرَةٌ (25)
خیال کر رہے ہوں گے کہ ان کے ساتھ کمر توڑ دینے والی سختی کی جائے گی۔
كَلَّآ اِذَا بَلَغَتِ التَّرَاقِيَ (26)
نہیں نہیں جب کہ جان گلے تک پہنچ جائے گی۔
وَقِيْلَ مَنْ ۜ رَاقٍ (27)
اور لوگ کہیں گے کوئی جھاڑنے والا ہے۔
وَظَنَّ اَنَّهُ الْفِرَاقُ (28)
اور وہ خیال کرے گا کہ یہ وقت جدائی کا ہے۔
وَالْتَفَّتِ السَّاقُ بِالسَّاقِ (29)
اور ایک پنڈلی دوسری پنڈلی سے لپٹ جائے گی۔
اِلٰى رَبِّكَ يَوْمَئِذٍ ِۨالْمَسَاقُ (30)
تیرے رب کی طرف اس دن چلنا ہوگا۔
فَلَا صَدَّقَ وَلَا صَلّـٰى (31)
پھر نہ تو اس نے تصدیق کی اور نہ نماز پڑھی۔
وَلٰكِنْ كَذَّبَ وَتَوَلّـٰى (32)
بلکہ جھٹلایا اور منہ موڑا۔
ثُـمَّ ذَهَبَ اِلٰٓى اَهْلِـهٖ يَتَمَطّـٰى (33)
پھر اپنے گھر والوں کی طرف اکڑتا ہوا چلا گیا۔
اَوْلٰى لَكَ فَاَوْلٰى (34)
(اے انسان) تیرے لیے افسوس پر افسوس ہے۔
ثُـمَّ اَوْلٰى لَكَ فَاَوْلٰى (35)
پھر تیرے لیے افسوس پر افسوس ہے۔
اَيَحْسَبُ الْاِنْسَانُ اَنْ يُّتْـرَكَ سُدًى (36)
کیا انسان یہ سمجھ رہا ہے کہ وہ یونہی چھوڑ دیا جائے گا۔
اَلَمْ يَكُ نُطْفَةً مِّنْ مَّنِيٍّ يُّمْنٰى (37)
کیا وہ ٹپکتی منی کی ایک بوند نہ تھا۔
ثُـمَّ كَانَ عَلَقَةً فَخَلَقَ فَسَوّ ٰ ى (38)
پھر وہ لوتھڑا بنا، پھر اللہ نے اسے بنا کر ٹھیک کیا۔
فَجَعَلَ مِنْهُ الزَّوْجَيْنِ الذَّكَـرَ وَالْاُنْثٰى (39)
پھر اس نے مرد و عورت کا جوڑا بنایا۔
اَلَيْسَ ذٰلِكَ بِقَادِرٍ عَلٰٓى اَنْ يُّحْيِىَ الْمَوْتٰى (40)
پھر کیا وہ اللہ مردے زندہ کردینے پر قادر نہیں۔