قرآن حکیم            

مکمل سورت
سورت نمبر
آیت نمبر
ایک آیت
(70) سورۃ المعارج (مکی، آیات 44)
بِسْمِ اللّـٰهِ الرَّحْـمٰنِ الرَّحِيْـمِ
سَاَلَ سَآئِلٌ بِعَذَابٍ وَّاقِــعٍ (1)
ایک سوال کرنے والے نے اس عذاب کا سوال کیا جو واقع ہونے والا ہے۔
لِّلْكَافِـرِيْنَ لَيْسَ لَـهٝ دَافِــعٌ (2)
کافروں کے لیے کہ اس کا کوئی ٹالنے والا نہیں۔
مِّنَ اللّـٰهِ ذِى الْمَعَارِجِ (3)
جو اللہ کی طرف سے واقع ہوگا جو سیڑھیوں کا (یعنی آسمانوں کا) مالک ہے۔
تَعْرُجُ الْمَلَآئِكَـةُ وَالرُّوْحُ اِلَيْهِ فِىْ يَوْمٍ كَانَ مِقْدَارُهٝ خَمْسِيْنَ اَلْفَ سَنَةٍ (4)
(جن سیڑھیوں سے) فرشتے اور اہلِ ایمان کی روحیں اس کے پاس چڑھ کر جاتی ہیں (اور وہ عذاب) اس دن ہو گا جس کی مقدار پچاس ہزار سال کی ہے۔
فَاصْبِـرْ صَبْرًا جَـمِيْلًا (5)
آپ اچھی طرح سے صبر کیے رہیں۔
اِنَّـهُـمْ يَرَوْنَهٝ بَعِيْدًا (6)
بے شک وہ اسے دور دیکھتے ہیں۔
وَنَرَاهُ قَرِيْبًا (7)
اور ہم اسے قریب دیکھتے ہیں۔
يَوْمَ تَكُـوْنُ السَّمَآءُ كَالْمُهْلِ (8)
جس دن آسمان پگھلے ہوئے تانبے کی مانند ہوگا۔
وَتَكُـوْنُ الْجِبَالُ كَالْعِهْنِ (9)
اور پہاڑ دھنی ہوئی رنگ دار اون کی طرح ہوں گے۔
وَلَا يَسْاَلُ حَـمِـيْمٌ حَـمِيْمًا (10)
اور کوئی دوست کسی دوست کو نہیں پوچھے گا۔
يُبَصَّرُوْنَـهُـمْ ۚ يَوَدُّ الْمُجْرِمُ لَوْ يَفْتَدِىْ مِنْ عَذَابِ يَوْمِئِذٍ بِبَنِيْهِ (11)
وہ انہیں دکھائے جائیں گے، مجرم چاہے گا کہ کاش اس دن کے عذاب کے بدلے میں اپنے بیٹوں کو دے دے۔
وَصَاحِبَتِهٖ وَاَخِيْهِ (12)
اور اپنی بیوی اور اپنے بھائی کو۔
وَفَصِيْلَتِهِ الَّتِىْ تُؤْوِيْهِ (13)
اور اپنے اس کنبہ کو جو اسے پناہ دیتا تھا۔
وَمَنْ فِى الْاَرْضِ جَـمِيْعًا ثُـمَّ يُنجِيْهِ (14)
اور ان سب کو جو زمین میں ہیں پھر اپنے آپ کو بچا لے۔
كَلَّا ۖ اِنَّـهَا لَظٰى (15)
ہرگز نہیں بے شک وہ تو ایک آگ ہے۔
نَزَّاعَةً لِّلشَّوٰى (16)
کھالوں کو اتارنے والی۔
تَدْعُوْا مَنْ اَدْبَـرَ وَتَوَلّـٰى (17)
اس کو بلائے گی جس نے پیٹھ پھیری اور منہ موڑا۔
وَجَمَعَ فَاَوْعٰى (18)
اور مال جمع کیا اور گن گن کر رکھا۔
اِنَّ الْاِنْسَانَ خُلِقَ هَلُوْعًا (19)
بے شک انسان کم ہمت پیدا ہوا ہے۔
اِذَا مَسَّهُ الشَّرُّ جَزُوْعًا (20)
جب اسے تکلیف پہنچتی ہے تو چلا اٹھتا ہے۔
وَاِذَا مَسَّهُ الْخَيْـرُ مَنُـوْعًا (21)
اور جب اسے مال ملتا ہے تو بڑا بخیل ہے۔
اِلَّا الْمُصَلِّيْنَ (22)
مگر وہ نمازی۔
اَلَّـذِيْنَ هُـمْ عَلٰى صَلَاتِـهِـمْ دَآئِمُوْنَ (23)
جو اپنی نماز پر ہمیشہ سے قائم ہیں۔
وَالَّـذِيْنَ فِىٓ اَمْوَالِـهِـمْ حَقٌّ مَّعْلُوْمٌ (24)
اور وہ جن کے مالوں میں حصہ معین ہے۔
لِّلسَّآئِلِ وَالْمَحْرُوْمِ (25)
سائل اور غیر سائل کے لیے۔
وَالَّـذِيْنَ يُصَدِّقُوْنَ بِيَوْمِ الدِّيْنِ (26)
اور وہ جو قیامت کے دن کا یقین رکھتے ہیں۔
وَالَّـذِيْنَ هُـمْ مِّنْ عَذَابِ رَبِّـهِـمْ مُّشْفِقُوْنَ (27)
اور وہ جو اپنے رب کے عذاب سے ڈرنے والے ہیں۔
اِنَّ عَذَابَ رَبِّـهِـمْ غَيْـرُ مَاْمُوْنٍ (28)
بے شک ان کے رب کے عذاب کا خطرہ لگا ہوا ہے۔
وَالَّـذِيْنَ هُـمْ لِفُرُوْجِهِـمْ حَافِظُوْنَ (29)
اور وہ جو اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کرتے ہیں۔
اِلَّا عَلٰٓى اَزْوَاجِهِـمْ اَوْ مَا مَلَكَتْ اَيْمَانُـهُـمْ فَاِنَّـهُـمْ غَيْـرُ مَلُوْمِيْنَ (30)
مگر اپنی بیویوں یا اپنی لونڈیوں سے، سو بے شک (اس میں) انہیں کوئی ملامت نہیں۔
فَمَنِ ابْتَغٰى وَرَآءَ ذٰلِكَ فَاُولٰٓئِكَ هُـمُ الْعَادُوْنَ (31)
پس جو کوئی اس کے سوا چاہے سو وہی لوگ حد سے بڑھنے والے ہیں۔
وَالَّـذِيْنَ هُـمْ لِاَمَانَاتِـهِـمْ وَعَهْدِهِـمْ رَاعُوْنَ (32)
اور وہ جو اپنی امانتوں اور عہدوں کی رعایت رکھتے ہیں۔
وَالَّـذِيْنَ هُـمْ بِشَهَادَاتِـهِـمْ قَآئِمُوْنَ (33)
اور وہ جو اپنی گواہیوں پر قائم رہتے ہیں۔
وَالَّـذِيْنَ هُـمْ عَلٰى صَلَاتِـهِـمْ يُحَافِظُوْنَ (34)
اور وہ جو اپنی نمازوں کی حفاظت کرتے ہیں۔
اُولٰٓئِكَ فِىْ جَنَّاتٍ مُّكْـرَمُوْنَ (35)
وہی لوگ باغوں میں عزت سے رہیں گے۔
فَمَالِ الَّـذِيْنَ كَفَرُوْا قِبَلَكَ مُهْطِعِيْنَ (36)
پس کافروں کو کیا ہوگیا کہ آپ کی طرف دوڑے آ رہے ہیں۔
عَنِ الْيَمِيْنِ وَعَنِ الشِّمَالِ عِزِيْنَ (37)
دائیں اور بائیں سے ٹولیاں بنا کر۔
اَيَطْمَعُ كُلُّ امْرِئٍ مِّنْـهُـمْ اَنْ يُّدْخَلَ جَنَّةَ نَعِـيْمٍ (38)
کیا ہر ایک ان میں سے طمع رکھتا ہے کہ وہ نعمت کے باغ میں داخل کیا جائے گا۔
كَلَّا ۖ اِنَّا خَلَقْنَاهُـمْ مِّمَّا يَعْلَمُوْنَ (39)
ہرگز نہیں بے شک ہم نے انہیں اس چیز سے پیدا کیا ہے جسے وہ بھی جانتے ہیں۔
فَلَآ اُقْسِمُ بِرَبِّ الْمَشَارِقِ وَالْمَغَارِبِ اِنَّا لَقَادِرُوْنَ (40)
پس میں مشرقوں اور مغربوں کے پروردگار کی قسم کھاتا ہوں (یعنی اپنی ذات کی) کہ ہم ضرور قادر ہیں۔
عَلٰٓى اَنْ نُّبَدِّلَ خَيْـرًا مِّنْـهُـمْ وَمَا نَحْنُ بِمَسْبُوقِيْنَ (41)
اس بات پر کہ ہم ان سے بہتر لوگ بدل کر لا سکتے ہیں اور ہم عاجز بھی نہیں ہیں۔
فَذَرْهُـمْ يَخُوْضُوْا وَيَلْعَبُوْا حَتّـٰى يُلَاقُوْا يَوْمَهُـمُ الَّـذِىْ يُوْعَدُوْنَ (42)
پھر انہیں چھوڑ دو کہ وہ بیہودہ باتوں اور کھیل میں لگے رہیں یہاں تک کہ وہ دن دیکھ لیں جس کا ان سے وعدہ کیا جاتا ہے۔
يَوْمَ يَخْرُجُوْنَ مِنَ الْاَجْدَاثِ سِرَاعًا كَاَنَّـهُـمْ اِلٰى نُصُبٍ يُّوْفِضُوْنَ (43)
جس دن وہ دوڑتے ہوئے قبروں سے نکل پڑیں گے گویا کہ وہ ایک نشان کی طرف دوڑے چلے جارہے ہیں۔
خَاشِعَةً اَبْصَارُهُـمْ تَـرْهَقُهُـمْ ذِلَّـةٌ ۚ ذٰلِكَ الْيَوْمُ الَّـذِىْ كَانُـوْا يُوْعَدُوْنَ (44)
ان کی نگاہیں جھکی ہوں گی ان پر ذلت چھا رہی ہوگی، یہی وہ دن ہے جس کا ان سے وعدہ کیا جاتا تھا۔