قرآن حکیم            

مکمل سورت
سورت نمبر
آیت نمبر
ایک آیت
(54) سورۃ القمر (مکی، آیات 55)
بِسْمِ اللّـٰهِ الرَّحْـمٰنِ الرَّحِيْـمِ
اِقْتَـرَبَتِ السَّاعَةُ وَانْشَقَّ الْقَمَرُ (1)
قیامت قریب آگئی اور چاند پھٹ گیا۔
وَاِنْ يَّرَوْا اٰيَةً يُّعْرِضُوْا وَيَقُوْلُوْا سِحْرٌ مُّسْتَمِرٌّ (2)
اور اگر وہ کوئی معجزہ دیکھ لیں تو اس سے منہ موڑ لیں اور کہیں یہ تو ہمیشہ سے چلا آتا جادو ہے۔
وَكَذَّبُوْا وَاتَّبَعُـوٓا اَهْوَآءَهُـمْ ۚ وَكُلُّ اَمْرٍ مُّسْتَقِرٌّ (3)
اور انہوں نے جھٹلایا اور اپنی خواہشوں کی پیروی کی، اور ہر بات کے لیے ایک وقت مقرر ہے۔
وَلَقَدْ جَآءَهُـمْ مِّنَ الْاَنْبَآءِ مَا فِيْهِ مُزْدَجَرٌ (4)
اور ان کے پاس وہ خبریں آچکی ہیں جن میں کافی تنبیہ ہے۔
حِكْـمَةٌ بَالِغَةٌ فَمَا تُغْنِ النُّذُرُ (5)
اور پوری دانائی بھی ہے پر ان کو ڈرانے والوں سے فائدہ نہیں پہنچا۔
فَتَوَلَّ عَنْـهُـمْ ۘ يَوْمَ يَدْعُ الـدَّاعِ اِلٰى شَىْءٍ نُّكُـرٍ (6)
پس ان سے منہ موڑ لے، جس دن پکارنے والا ایک نا پسند چیز کے لیے پکارے گا۔
خُشَّعًا اَبْصَارُهُـمْ يَخْرُجُوْنَ مِنَ الْاَجْدَاثِ كَاَنَّـهُـمْ جَرَادٌ مُّنْتَشِرٌ (7)
اپنی آنکھیں نیچے کیے ہوئے قبروں سے نکل پڑیں گے جیسے ٹڈیاں پھیل پڑی ہوں۔
مُّهْطِعِيْنَ اِلَى الـدَّاعِ ۖ يَقُوْلُ الْكَافِرُوْنَ هٰذَا يَوْمٌ عَسِرٌ (8)
بلانے والے کی طرف بھاگے جا رہے ہوں گے، یہ کافر کہہ رہے ہوں گے یہ تو بڑا ہی سخت دن ہے۔
كَذَّبَتْ قَبْلَـهُـمْ قَوْمُ نُـوْحٍ فَكَذَّبُوْا عَبْدَنَا وَقَالُوْا مَجْنُـوْنٌ وَّّازْدُجِرَ (9)
ان سے پہلے قوم نوح نے بھی جھٹلایا تھا پس انہوں نے ہمارے بندے کو جھٹلایا اور کہا دیوانہ ہے اور اسے جھڑک دیا گیا۔
فَدَعَا رَبَّهٝٓ اَنِّىْ مَغْلُوْبٌ فَانْتَصِرْ (10)
پھر نوح نے اپنے رب کو پکارا کہ میں تو مغلوب ہوگیا تو میری مدد کر۔
فَفَتَحْنَآ اَبْوَابَ السَّمَآءِ بِمَآءٍ مُّنْهَمِرٍ (11)
پھر ہم نے موسلا دھار پانی سے آسمان کے دروازے کھول دیے۔
وَفَجَّرْنَا الْاَرْضَ عُيُوْنًا فَالْتَقَى الْمَآءُ عَلٰٓى اَمْرٍ قَدْ قُدِرَ (12)
اور ہم نے زمین سے چشمے جاری کر دیے پھر جہاں تک پانی کا چڑھاؤ چڑھنا ٹھہر چکا تھا چڑھ آیا۔
وَحَـمَلْنَاهُ عَلٰى ذَاتِ اَلْوَاحٍ وَّدُسُرٍ (13)
اور ہم نے نوح کو تختوں اور کیلوں والی کشتی پر سوار کیا۔
تَجْرِىْ بِاَعْيُنِنَاۚ جَزَآءً لِّمَنْ كَانَ كُفِرَ (14)
جو ہماری عنایت سے چلتی تھی، یہ اس کا بدلہ تھا جس کا انکار کیا گیا تھا۔
وَلَقَدْ تَّـرَكْنَاهَآ اٰيَةً فَهَلْ مِنْ مُّدَّكِرٍ (15)
اور ہم نے اس کو ایک نشان بنا کر چھوڑ دیا پس کیا کوئی نصیحت پکڑنے والا ہے۔
فَكَـيْفَ كَانَ عَذَابِىْ وَنُذُرِ (16)
پھر (دیکھا) ہمارا عذاب اور ڈرانا کیسا تھا۔
وَلَقَدْ يَسَّرْنَا الْقُرْاٰنَ لِلـذِّكْرِ فَهَلْ مِنْ مُّدَّكِرٍ (17)
اور البتہ ہم نے تو سمجھنے کے لیے قرآن کو آسان کر دیا پھر کوئی ہے کہ سمجھے۔
كَذَّبَتْ عَادٌ فَكَـيْفَ كَانَ عَذَابِىْ وَنُذُرِ (18)
قوم عاد نے بھی جھٹلایا تھا پھر (دیکھا) ہمارا عذاب اور ڈرانا کیسا تھا۔
اِنَّـآ اَرْسَلْنَا عَلَيْـهِـمْ رِيْحًا صَرْصَرًا فِىْ يَوْمِ نَحْسٍ مُّسْتَمِرٍّ (19)
بے شک ہم نے ایک دن سخت آندھی بھیجی تھی جس کی نحوست دائمی تھی۔
تَنْزِعُ النَّاسَ كَاَنَّـهُـمْ اَعْجَازُ نَخْلٍ مُّنْقَعِرٍ (20)
جو لوگوں کو ایسا پھینک رہی تھی کہ گویا وہ کھجور کے جڑ سے اکھڑے ہوئے پیڑ ہیں۔
فَكَـيْفَ كَانَ عَذَابِىْ وَنُذُرِ (21)
پھر (دیکھا) ہمارا عذاب اور ڈرانا کیسا تھا۔
وَلَقَدْ يَسَّرْنَا الْقُرْاٰنَ لِلـذِّكْرِ فَهَلْ مِنْ مُّدَّكِـرٍ (22)
اور البتہ ہم نے قرآن کو سمجھنے کے لیے آسان کر دیا ہے پھر ہے کوئی کہ سمجھے۔
كَذَّبَتْ ثَمُوْدُ بِالنُّذُرِ (23)
قوم ثمود نے بھی ڈرانے والوں کو جھٹلایا تھا۔
فَقَالُـوٓا اَبَشَـرًا مِّنَّا وَاحِدًا نَّتَّبِعُهٝٓ ۙ اِنَّـآ اِذًا لَّفِىْ ضَلَالٍ وَّّسُعُرٍ (24)
پس کہا کیا ہم اپنے میں سے ایک آدمی کے کہنے پر چلیں گے، تب تو ہم ضرور گمراہی اور دیوانگی میں جا پڑیں گے۔
اَ اُ لْقِىَ الـذِّكْرُ عَلَيْهِ مِنْ بَيْنِنَا بَلْ هُوَ كَذَّابٌ اَشِرٌ (25)
کیا ہم میں سے اسی پر وحی بھیجی گئی بلکہ وہ بڑا جھوٹا (اور) شیخی خورہ ہے۔
سَيَعْلَمُوْنَ غَدًا مَّنِ الْكَذَّابُ الْاَشِرُ (26)
عنقریب انہیں معلوم ہو جائے گا کون بڑا جھوٹا (اور) شیخی خورہ ہے۔
اِنَّا مُرْسِلُو النَّاقَةِ فِتْنَةً لَّـهُـمْ فَارْتَقِبْـهُـمْ وَاصْطَبِـرْ (27)
بے شک ہم ان کی آزمائش کے لیے اونٹنی بھیجنے والے ہیں پس (اے صالح) ان کا انتظار کر اور صبر کر۔
وَنَبِّئْـهُـمْ اَنَّ الْمَآءَ قِسْـمَةٌ بَيْنَـهُـمْ ۖ كُلُّ شِرْبٍ مُّحْتَضَرٌ (28)
اور ان سے کہہ دو کہ پانی ان میں بٹ گیا ہے، ہر ایک اپنی باری سے پانی پلایا کرے۔
فَنَادَوْا صَاحِبَـهُـمْ فَتَعَاطٰى فَعَقَرَ (29)
پھر انہوں نے اپنے رفیق کو بلایا تب اس نے ہاتھ بڑھایا اور (اس کی) کانچیں کاٹ ڈالیں۔
فَكَـيْفَ كَانَ عَذَابِىْ وَنُذُرِ (30)
پھر (دیکھا) ہمارا عذاب اور ڈرانا کیسا تھا۔
اِنَّـآ اَرْسَلْنَا عَلَيْـهِـمْ صَيْحَةً وَّّاحِدَةً فَكَانُـوْا كَهَشِيْـمِ الْمُحْتَظِرِ (31)
بے شک ہم نے ان پر ایک زور کی چیخ کا عذاب بھیجا پھر وہ ایسے ہو گئے جیسا کانٹو ں کی باڑ کا چورا۔
وَلَقَدْ يَسَّرْنَا الْقُرْاٰنَ لِلـذِّكْرِ فَهَلْ مِنْ مُّدَّكِـرٍ (32)
اور البتہ ہم نے قرآن کو سمجھنے کے لیے آسان کر دیا ہے پھر ہے کوئی سمجھنے والا۔
كَذَّبَتْ قَوْمُ لُـوْطٍ بِالنُّذُرِ (33)
قوم لوط نے بھی ڈرانے والوں کو جھٹلایا تھا۔
اِنَّـآ اَرْسَلْنَا عَلَيْـهِـمْ حَاصِبًا اِلَّآ اٰلَ لُوْطٍ ۖ نَّجَّيْنَاهُـمْ بِسَحَرٍ (34)
بے شک ہم نے ان پر پتھر برسائے سوائے لوط کے گھر والوں کے، ہم نے انہیں پچھلی رات نجات دی۔
نِّـعْمَةً مِّنْ عِنْدِنَا ۚ كَذٰلِكَ نَجْزِىْ مَنْ شَكَـرَ (35)
یہ ہماری طرف سے فضل ہے، جو شکر کرتا ہے ہم اسے ایسا ہی بدلہ دیا کرتے ہیں۔
وَلَقَدْ اَنْذَرَهُـمْ بَطْشَتَنَا فَتَمَارَوْا بِالنُّذُرِ (36)
اور وہ انہیں ہماری پکڑ سے ڈرا چکا تھا پس وہ ڈرانے میں شک کرنے لگے۔
وَلَقَدْ رَاوَدُوْهُ عَنْ ضَيْفِهٖ فَطَمَسْنَـآ اَعْيُنَـهُـمْ فَذُوْقُوْا عَذَابِىْ وَنُذُرِ (37)
اور البتہ اس سے اس کے مہمانوں کا مطالبہ کرنے لگے تو ہم نے ان کی آنکھیں مٹا دیں، پس (کہا) میرے عذاب اور میرے ڈرانے کا مزہ چکھو۔
وَلَقَدْ صَبَّحَهُـمْ بُكْـرَةً عَذَابٌ مُّسْتَقِرٌّ (38)
اور بے شک صبح کو ان پر ایک عذاب نہ ٹلنے والا آ پڑا۔
فَذُوْقُوْا عَذَابِىْ وَنُذُرِ (39)
پس میرے عذاب اور میرے ڈرانے کا مزہ چکھو۔
وَلَقَدْ يَسَّرْنَا الْقُرْاٰنَ لِلـذِّكْرِ فَهَلْ مِنْ مُّدَّكِـرٍ (40)
اور البتہ ہم نے سمجھنے کے لیے قرآن کو آسان کر دیا ہے پھر ہے کوئی سمجھنے والا۔
وَلَقَدْ جَآءَ اٰلَ فِرْعَوْنَ النُّذُرُ (41)
اور البتہ فرعون کے خاندان کے پاس بھی ڈرانے والے آئے تھے۔
كَذَّبُوْا بِاٰيَاتِنَا كُلِّـهَا فَاَخَذْنَاهُـمْ اَخْذَ عَزِيْزٍ مُّقْتَدِرٍ (42)
انہوں نے ہماری سب نشانیوں کو جھٹلایا پھر ہم نے انہیں بڑی زبردست پکڑ سے پکڑا۔
اَكُفَّارُكُمْ خَيْـرٌ مِّنْ اُولٰٓئِكُمْ اَمْ لَكُم بَـرَآءَةٌ فِى الزُّبُرِ (43)
کیا تمہارے منکر ان لوگوں سے اچھے ہیں یا تمہارے لیے کتابوں میں نجات لکھی ہے۔
اَمْ يَقُوْلُوْنَ نَحْنُ جَـمِـيْعٌ مُّنْتَصِرٌ (44)
کیا وہ یہ کہتے ہیں کہ ہم زبردست جماعت ہیں۔
سَيُهْزَمُ الْجَمْعُ وَيُوَلُّوْنَ الـدُّبُـرَ (45)
عنقریب یہ جماعت بھی شکست کھائے گی اور پیٹھ پھیر کر بھاگیں گے۔
بَلِ السَّاعَةُ مَوْعِدُهُـمْ وَالسَّاعَةُ اَدْهٰى وَاَمَرُّ (46)
بلکہ قیامت ان کے وعدے کا وقت ہے اور قیامت زیادہ دہشت ناک اور تلخ تر ہے۔
اِنَّ الْمُجْرِمِيْنَ فِىْ ضَلَالٍ وَّّسُعُرٍ (47)
بے شک مجرم گمراہی اور جنون میں ہیں۔
يَوْمَ يُسْحَبُوْنَ فِى النَّارِ عَلٰى وُجُوْهِهِـمْ ذُوْقُوْا مَسَّ سَقَرَ (48)
جس دن اپنے منہ کے بل دوزخ میں گھسیٹے جائیں گے (کہا جائے گا) آگ لگنے کا مزہ چکھو۔
اِنَّا كُلَّ شَىْءٍ خَلَقْنَاهُ بِقَدَرٍ (49)
بے شک ہم نے ہر چیز اندازے سے بنائی ہے۔
وَمَآ اَمْرُنَـآ اِلَّا وَاحِدَةٌ كَلَمْـحٍ بِالْبَصَرِ (50)
اور ہمارا حکم تو ایک ہی بات ہوتی ہے جیسا کہ پلک جھپکنا۔
وَلَقَدْ اَهْلَكْنَـآ اَشْيَاعَكُمْ فَهَلْ مِنْ مُّدَّكِـرٍ (51)
اور البتہ ہم تمہارے جیسوں کو غارت کر چکے ہیں پھر کیا کوئی سمجھنے والا ہے۔
وَكُلُّ شَىْءٍ فَعَلُوْهُ فِى الزُّبُرِ (52)
اور پھر جو کچھ بھی انہوں نے کیا ہے وہ اعمال ناموں میں موجود ہے۔
وَكُلُّ صَغِيْـرٍ وَّكَبِيْـرٍ مُّسْتَطَـرٌ (53)
اور ہر چھوٹا اور بڑا کام لکھا ہوا ہے۔
اِنَّ الْمُتَّقِيْنَ فِىْ جَنَّاتٍ وَّّنَهَرٍ (54)
بے شک پرہیزگار باغوں اور نہروں میں ہوں گے۔
فِىْ مَقْعَدِ صِدْقٍ عِنْدَ مَلِيْكٍ مُّقْتَدِرٍ (55)
عزت کے مقام میں قادر مطلق بادشاہ کے حضور میں۔