قرآن حکیم            

مکمل سورت
سورت نمبر
آیت نمبر
ایک آیت
(37) سورۃ الصافات (مکی، آیات 182)
بِسْمِ اللّـٰهِ الرَّحْـمٰنِ الرَّحِيْـمِ
وَالصَّآفَّاتِ صَفًّا (1)
صف باندھ کر کھڑے ہونے والوں کی قسم ہے۔
فَالزَّاجِرَاتِ زَجْرًا (2)
پھر جھڑک کر ڈانٹنے والوں کی۔
فَالتَّالِيَاتِ ذِكْرًا (3)
پھر ذکر الٰہی کے تلاوت کرنے والوں کی۔
اِنَّ اِلٰـهَكُمْ لَوَاحِدٌ (4)
البتہ تمہارا معبود ایک ہی ہے۔
رَّبُّ السَّمَاوَاتِ وَالْاَرْضِ وَمَا بَيْنَـهُمَا وَرَبُّ الْمَشَارِقِ (5)
آسمانوں اور زمین اور اس کے اندر کی سب چیزوں کا اور مشرقوں کا رب ہے۔
اِنَّا زَيَّنَّا السَّمَآءَ الـدُّنْيَا بِزِيْنَـةِ ِ ۨ الْكَوَاكِبِ (6)
ہم نے نیچے کے آسمان کو ستاروں سے سجایا ہے۔
وَحِفْظًا مِّنْ كُلِّ شَيْطَانٍ مَّارِدٍ (7)
اور اسے ہر ایک سرکش شیطان سے محفوظ رکھا ہے۔
لَّا يَسَّمَّعُوْنَ اِلَى الْمَلَاِ الْاَعْلٰى وَيُقْذَفُوْنَ مِنْ كُلِّ جَانِبٍ (8)
وہ عالم بالا کی باتیں نہیں سن سکتے اور ان پر ہر طرف سے (انگارے) پھینکے جاتے ہیں۔
دُحُوْرًا ۖ وَّلَـهُـمْ عَذَابٌ وَّاصِبٌ (9)
بھگانے کے لیے، اور ان پر ہمیشہ کا عذاب ہے۔
اِلَّا مَنْ خَطِفَ الْخَطْفَةَ فَاَتْبَعَهٝ شِهَابٌ ثَاقِبٌ (10)
مگر جو کوئی اچک لے جائے تو اس کے پیچھے دہکتا ہوا انگارہ پڑتا ہے۔
فَاسْتَفْتِـهِـمْ اَهُـمْ اَشَدُّ خَلْقًا اَمْ مَّنْ خَلَقْنَا ۚ اِنَّا خَلَقْنَاهُـمْ مِّنْ طِيْنٍ لَّازِبٍ (11)
پس ان سے پوچھیے کیا ان کا بنانا زیادہ مشکل ہے یا ان کا جنہیں ہم نے پیدا کیا ہے، بے شک ہم نے انہیں لیس دار مٹی سے پیدا کیا ہے۔
بَلْ عَجِبْتَ وَيَسْخَرُوْنَ (12)
بلکہ آپ نے تو تعجب کیا ہے اور وہ ٹھٹھا کرتے ہیں۔
وَاِذَا ذُكِّرُوْا لَا يَذْكُرُوْنَ (13)
اور جب انہیں نصیحت کی جاتی ہے تو قبول نہیں کرتے۔
وَاِذَا رَاَوْا اٰيَةً يَّسْتَسْخِرُوْنَ (14)
اور جب کوئی معجزہ دیکھتے ہیں تو ہنسی کرتے ہیں۔
وَقَالُوٓا اِنْ هٰذَآ اِلَّا سِحْرٌ مُّبِيْنٌ (15)
اور کہتے ہیں یہ تو محض صریح جادو ہے۔
ءَاِذَا مِتْنَا وَكُنَّا تُرَابًا وَّعِظَامًا ءَاِنَّا لَمَبْعُوْثُوْنَ (16)
کیا جب ہم مر جائیں گے اور مٹی اور ہڈیاں ہو جائیں گے تو کیا ہم پھر اٹھائے جائیں گے۔
اَوَاٰبَآؤُنَا الْاَوَّلُوْنَ (17)
اور کیا ہمارے پہلے باپ دادا بھی۔
قُلْ نَعَمْ وَاَنْتُـمْ دَاخِرُوْنَ (18)
کہہ دو ہاں اور تم ذلیل ہونے والے ہو گے۔
فَاِنَّمَا هِىَ زَجْرَةٌ وَّّاحِدَةٌ فَاِذَا هُـمْ يَنْظُرُوْنَ (19)
پس وہ تو ایک زور کی آواز ہوگی پس ناگہان وہ دیکھنے لگیں گے۔
وَقَالُوْا يَا وَيْلَنَا هٰذَا يَوْمُ الدِّيْنِ (20)
اور کہیں گے ہائے ہماری کمبختی جزا کا دن یہی ہے۔
هٰذَا يَوْمُ الْفَصْلِ الَّـذِىْ كُنْتُـم بِهٖ تُكَذِّبُوْنَ (21)
یہی فیصلے کا دن ہے جسے تم جھٹلایا کرتے تھے۔
اُحْشُرُوا الَّـذِيْنَ ظَلَمُوْا وَاَزْوَاجَهُـمْ وَمَا كَانُـوْا يَعْبُدُوْنَ (22)
انہیں جمع کردو جنہوں نے ظلم کیا اور ان کی بیویوں کو اور جن کی وہ عبادت کرتے تھے۔
مِنْ دُوْنِ اللّـٰهِ فَاهْدُوْهُـمْ اِلٰى صِرَاطِ الْجَحِيْـمِ (23)
سوائے اللہ کے، پھر انہیں جہنم کے راستے کی طرف ہانک کر لے جاؤ۔
وَقِفُوْهُـمْ ۖ اِنَّـهُـمْ مَّسْئُـوْلُوْنَ (24)
اور انہیں کھڑا کرو، ان سے دریافت کرنا ہے۔
مَا لَكُمْ لَا تَنَاصَرُوْنَ (25)
تمہیں کیا ہوا کہ آپس میں ایک دوسرے کی مدد نہیں کرتے۔
بَلْ هُـمُ الْيَوْمَ مُسْتَسْلِمُوْنَ (26)
بلکہ آج کے دن وہ سر جھکائے کھڑے ہوں گے۔
وَاَقْبَلَ بَعْضُهُـمْ عَلٰى بَعْضٍ يَّتَسَآءَلُوْنَ (27)
اور ایک دوسرے کی طرف متوجہ ہو کر پوچھے گا۔
قَالُوٓا اِنَّكُمْ كُنْتُـمْ تَاْتُوْنَنَا عَنِ الْيَمِيْنِ (28)
کہیں گے بے شک تم ہمارے پاس دائیں طرف سے آتے تھے۔
قَالُوْا بَل لَّمْ تَكُـوْنُـوْا مُؤْمِنِيْنَ (29)
کہیں گے بلکہ تم خود ہی ایمان والے نہیں تھے۔
وَمَا كَانَ لَنَا عَلَيْكُمْ مِّنْ سُلْطَانٍ ۖ بَلْ كُنْتُـمْ قَوْمًا طَاغِيْنَ (30)
اور ہمیں تم پر کوئی زور نہیں تھا، بلکہ تم ہی سرکش لوگ تھے۔
فَحَقَّ عَلَيْنَا قَوْلُ رَبِّنَآ ۖ اِنَّا لَـذَآئِقُوْنَ (31)
پھر ہم سب پر ہمارے رب کا قول پورا ہوگیا، کہ ہم سب عذاب چکھنے والے ہیں۔
فَاَغْوَيْنَاكُمْ اِنَّا كُنَّا غَاوِيْنَ (32)
پھر ہم نے تمہیں بھی گمراہ کیا ہم خود بھی گمراہ تھے۔
فَاِنَّـهُـمْ يَوْمَئِذٍ فِى الْعَذَابِ مُشْتَـرِكُـوْنَ (33)
پھر اس دن عذاب میں وہ سب یکساں ہوں گے۔
اِنَّا كَذٰلِكَ نَفْعَلُ بِالْمُجْرِمِيْنَ (34)
بے شک ہم مجرموں سے ایسا ہی سلوک کیا کرتے ہیں۔
اِنَّـهُـمْ كَانُـوٓا اِذَا قِيْلَ لَـهُـمْ لَآ اِلٰـهَ اِلَّا اللّـٰهُ يَسْتَكْبِـرُوْنَ (35)
بے شک وہ ایسے تھے کہ جب ان سے کہا جاتا تھا کہ سوائے اللہ کے اور کوئی معبود نہیں تو وہ تکبر کیا کرتے تھے۔
وَيَقُوْلُوْنَ اَئِنَّا لَتَارِكُـوٓا اٰلِـهَتِنَا لِشَاعِرٍ مَّجْنُـوْنٍ (36)
اور وہ کہتے تھے کیا ہم اپنے معبودوں کو ایک شاعر دیوانہ کے کہنے سے چھوڑ دیں گے۔
بَلْ جَآءَ بِالْحَقِّ وَصَدَّقَ الْمُرْسَلِيْنَ (37)
بلکہ وہ حق لایا ہے اور اس نے سب رسولوں کی تصدیق کی ہے۔
اِنَّكُمْ لَـذَآئِقُو الْعَذَابِ الْاَلِـيْمِ (38)
بے شک اب تم دردناک عذاب چکھو گے۔
وَمَا تُجْزَوْنَ اِلَّا مَا كُنْتُـمْ تَعْمَلُوْنَ (39)
اور تمہیں وہی بدلہ دیا جائے گا جو تم کیا کرتے تھے۔
اِلَّا عِبَادَ اللّـٰهِ الْمُخْلَصِيْنَ (40)
مگر جو اللہ کے خاص بندے ہیں۔
اُولٰٓئِكَ لَـهُـمْ رِزْقٌ مَّعْلُوْمٌ (41)
یہی لوگ ہیں جن کے لیے رزق معلوم ہے۔
فَوَاكِهُ ۖ وَهُـمْ مُّكْـرَمُوْنَ (42)
میوے، اور انہیں کوعزت دی جائے گی۔
فِىْ جَنَّاتِ النَّعِيْـمِ (43)
نعمتوں کے باغوں میں۔
عَلٰى سُرُرٍ مُّتَقَابِلِيْنَ (44)
ایک دوسرے کے سامنے تختوں پر۔
يُطَافُ عَلَيْـهِـمْ بِكَاْسٍ مِّنْ مَّعِيْنٍ (45)
ان میں صاف شراب کا دور چل رہا ہوگا۔
بَيْضَآءَ لَـذَّةٍ لِّلشَّارِبِيْنَ (46)
سفید پینے والوں کے لیے لذیذ ہوگی۔
لَا فِيْـهَا غَوْلٌ وَّلَا هُـمْ عَنْـهَا يُنْزَفُوْنَ (47)
نہ اس میں درد سر ہوگا اور نہ انہیں اس سے نشہ ہوگا۔
وَعِنْدَهُـمْ قَاصِرَاتُ الطَّرْفِ عِيْنٌ (48)
اور ان کے پاس نیچی نگاہ والی بڑی آنکھوں والی ہوں گی۔
كَاَنَّهُنَّ بَيْضٌ مَّكْنُـوْنٌ (49)
گویا کہ وہ پردہ میں رکھے ہوئے انڈے ہیں۔
فَاَقْبَلَ بَعْضُهُـمْ عَلٰى بَعْضٍ يَّتَسَآءَلُوْنَ (50)
پس وہ ایک دوسرے کی طرف متوجہ ہو کر آپس میں سوال کریں گے۔
قَالَ قَـآئِلٌ مِّنْـهُـمْ اِنِّىْ كَانَ لِـىْ قَرِيْنٌ (51)
ان میں سے ایک کہنے والا کہے گا کہ میرا ایک ساتھی تھا۔
يَقُوْلُ اَئِنَّكَ لَمِنَ الْمُصَدِّقِيْنَ (52)
وہ کہا کرتا تھا کہ کیا تو تصدیق کرنے والوں میں ہے۔
ءَاِذَا مِتْنَا وَكُنَّا تُرَابًا وَّعِظَامًا ءَاِنَّا لَمَدِيْنُـوْنَ (53)
کیا جب ہم مر جائیں گے اور مٹی اور ہڈیاں ہوجائیں گے تو کیا ہمیں بدلہ دیا جائے گا۔
قَالَ هَلْ اَنْتُـمْ مُّطَّلِعُوْنَ (54)
کہے گا کیا تم بھی دیکھنا چاہتے ہو۔
فَاطَّلَعَ فَرَاٰهُ فِىْ سَوَآءِ الْجَحِـيْمِ (55)
پس وہ جھانکے گا تو اسے دوزخ کے درمیان دیکھے گا۔
قَالَ تَاللّهِ اِنْ كِدْتَّ لَتُـرْدِيْنِ (56)
کہے گا اللہ کی قسم! تو تو قریب تھا کہ مجھے ہلاک ہی کر دے۔
وَلَوْلَا نِعْمَةُ رَبِّىْ لَكُنْتُ مِنَ الْمُحْضَرِيْنَ (57)
اور اگر میرے رب کا فضل نہ ہوتا تو میں بھی حاضر کیے ہوئے مجرموں میں ہوتا۔
اَفَمَا نَحْنُ بِمَيِّتِيْنَ (58)
پس کیا اب ہم مرنے والے نہیں۔
اِلَّا مَوْتَتَنَا الْاُوْلٰى وَمَا نَحْنُ بِمُعَذَّبِيْنَ (59)
مگر ہمارا پہلی بار کا مرنا اور ہمیں عذاب نہیں دیا جائے گا۔
اِنَّ هٰذَا لَـهُوَ الْفَوْزُ الْعَظِيْـمُ (60)
بے شک یہی بڑی کامیابی ہے۔
لِمِثْلِ هٰذَا فَلْيَعْمَلِ الْعَامِلُوْنَ (61)
ایسی ہی کامیابی کے لیے عمل کرنے والوں کو عمل کرنا چاہیے۔
اَذٰلِكَ خَيْـرٌ نُّزُلًا اَمْ شَجَرَةُ الزَّقُّوْمِ (62)
کیا یہ اچھی مہمانی ہے یا تھوہر کا درخت۔
اِنَّا جَعَلْنَاهَا فِتْنَةً لِّلظَّالِمِيْنَ (63)
بے شک ہم نے اسے ظالموں کے لیے آزمائش بنایا ہے۔
اِنَّـهَا شَجَرَةٌ تَخْرُجُ فِىٓ اَصْلِ الْجَحِـيْمِ (64)
بے شک وہ ایک درخت ہے جو دوزخ کی جڑ میں اگتا ہے۔
طَلْعُهَا كَاَنَّـهٝ رُءُوْسُ الشَّيَاطِيْنِ (65)
اس کا پھل گویا کہ سانپوں کے پھن ہیں۔
فَاِنَّـهُـمْ لَاٰكِلُوْنَ مِنْـهَا فَمَالِئُوْنَ مِنْـهَا الْبُطُوْنَ (66)
پس بے شک وہ اس میں سے کھائیں گے پھر اس سے اپنے پیٹ بھر لیں گے۔
ثُـمَّ اِنَّ لَـهُـمْ عَلَيْـهَا لَشَوْبًا مِّنْ حَـمِيْـمٍ (67)
پھر اس پر ان کو کھولتا ہوا پانی (پیپ وغیرہ سے) ملا کر دیا جائے گا۔
ثُـمَّ اِنَّ مَرْجِعَهُـمْ لَاِلَى الْجَحِيْـمِ (68)
پھر بے شک دوزخ کی طرف ان کا لوٹنا ہوگا۔
اِنَّـهُـمْ اَلْفَوْا اٰبَآءَهُـمْ ضَآلِّيْنَ (69)
کیوں کہ انہوں نے اپنے باپ دادوں کو گمراہ پایا تھا۔
فَهُـمْ عَلٰٓى اٰثَارِهِـمْ يُهْرَعُوْنَ (70)
پھر وہ ان کے پیچھے دوڑتے چلے گئے۔
وَلَقَدْ ضَلَّ قَبْلَـهُـمْ اَكْثَرُ الْاَوَّلِيْنَ (71)
اور البتہ ان سے پہلے بہت سے اگلے لوگ گمراہ ہو چکے ہیں۔
وَلَقَدْ اَرْسَلْنَا فِـيْهِـمْ مُّنْذِرِيْنَ (72)
اور البتہ ہم نے ان میں ڈرانے والے بھیجے تھے۔
فَانْظُرْ كَيْفَ كَانَ عَاقِبَةُ الْمُنْذَرِيْنَ (73)
پھر دیکھ جنہیں ڈرایا گیا تھا ان کا کیا انجام ہوا۔
اِلَّا عِبَادَ اللّـٰهِ الْمُخْلَصِيْنَ (74)
مگر اللہ کے خالص بندے۔
وَلَقَدْ نَادَانَا نُـوْحٌ فَلَنِعْمَ الْمُجِيْبُوْنَ (75)
اور ہمیں نوح نے پکارا پس ہم کیا خوب جواب دینے والے ہیں۔
وَنَجَّيْنَاهُ وَاَهْلَـهٝ مِنَ الْكَرْبِ الْعَظِـيْمِ (76)
اور ہم نے اسے اور اس کے گھر والوں کو بڑی مصیبت سے نجات دی۔
وَجَعَلْنَا ذُرِّيَّتَهٝ هُـمُ الْبَاقِيْنَ (77)
اور ہم نے اس کی اولاد ہی کو باقی رہنے والی کر دیا۔
وَتَـرَكْنَا عَلَيْهِ فِى الْاٰخِرِيْنَ (78)
اور ہم نے ان کے لیے پیچھے آنے والے لوگوں میں یہ بات رہنے دی۔
سَلَامٌ عَلٰى نُـوْحٍ فِى الْعَالَمِيْنَ (79)
کہ سارے جہان میں نوح پر سلام ہو۔
اِنَّا كَذٰلِكَ نَجْزِى الْمُحْسِنِيْنَ (80)
بے شک ہم نیکو کاروں کو ایسا ہی بدلہ دیا کرتے ہیں۔
اِنَّهٝ مِنْ عِبَادِنَا الْمُؤْمِنِيْنَ (81)
بے شک وہ ہمارے ایماندار بندوں میں تھے۔
ثُـمَّ اَغْرَقْنَا الْاٰخَرِيْنَ (82)
پھر ہم نے دوسروں کو غرق کر دیا۔
وَاِنَّ مِنْ شِيْعَتِهٖ لَاِبْـرَاهِـيْمَ (83)
اور بے شک اسی کے طریق پر چلنے والوں میں ابراہیم بھی تھا۔
اِذْ جَآءَ رَبَّهٝ بِقَلْبٍ سَلِـيْمٍ (84)
جب کہ وہ پاک دل سے اپنے رب کی طرف رجوع ہوا۔
اِذْ قَالَ لِاَبِيْهِ وَقَوْمِهٖ مَاذَا تَعْبُدُوْنَ (85)
جب کہ اس نے اپنے باپ اور اپنی قوم سے کہا تم کس چیز کی عبادت کرتے ہو۔
اَئِفْكًا اٰلِـهَةً دُوْنَ اللّـٰهِ تُرِيْدُوْنَ (86)
کیا تم جھوٹے معبودوں کو اللہ کے سوا چاہتے ہو۔
فَمَا ظَنُّكُمْ بِرَبِّ الْعَالَمِيْنَ (87)
پھر تمہارا پروردگارِ عالم کی نسبت کیا خیال ہے۔
فَنَظَرَ نَظْرَةً فِى النُّجُوْمِ (88)
پھر اس نے ایک بار ستاروں میں غور سے دیکھا۔
فَقَالَ اِنِّىْ سَقِـيْمٌ (89)
پھر کہا بے شک میں بیمار ہوں۔
فَـتَوَلَّوْا عَنْهُ مُدْبِـرِيْنَ (90)
پس وہ لوگ اس کے ہاں سے پیٹھ پھیر کر واپس پھرے۔
فَرَاغَ اِلٰٓى اٰلِـهَتِـهِـمْ فَقَالَ اَلَا تَاْكُلُوْنَ (91)
پس وہ چپکے سے ان کے معبودوں کے پاس گیا پھر کہا کیا تم کھاتے نہیں۔
مَا لَكُمْ لَا تَنْطِقُوْنَ (92)
تمہیں کیا ہوا کہ تم بولتے نہیں۔
فَرَاغَ عَلَيْـهِـمْ ضَرْبًا بِالْيَمِيْنِ (93)
پھر وہ بڑے زور کے ساتھ دائیں ہاتھ سے ان کے توڑنے پر پل پڑا۔
فَاَقْبَلُوٓا اِلَيْهِ يَزِفُّوْنَ (94)
پھر وہ اس کی طرف دوڑتے ہوئے بڑھے۔
قَالَ اَتَعْبُدُوْنَ مَا تَنْحِتُوْنَ (95)
کہا کیا تم پوجتے ہو جنہیں تم خود تراشتے ہو۔
وَاللّـٰهُ خَلَقَكُمْ وَمَا تَعْمَلُوْنَ (96)
حالانکہ اللہ ہی نے تمہیں پیدا کیا اور جو تم بناتے ہو۔
قَالُوْا ابْنُـوْا لَـهٝ بُنْيَانًا فَاَلْـقُوْهُ فِى الْجَحِـيْمِ (97)
انہوں نے کہا اس کے لیے ایک مکان بناؤ پھر اس کو آگ میں ڈال دو۔
فَاَرَادُوْا بِهٖ كَيْدًا فَجَعَلْنَاهُـمُ الْاَسْفَلِيْنَ (98)
پس انہوں نے اس سے داؤ کرنے کا ارادہ کیا سو ہم نے انہیں ذلیل کر دیا۔
وَقَالَ اِنِّىْ ذَاهِبٌ اِلٰى رَبِّىْ سَيَـهْدِيْنِ (99)
اور کہا میں نے اپنے رب کی طرف جانے والا ہوں وہ مجھے راہ بتائے گا۔
رَبِّ هَبْ لِـىْ مِنَ الصَّالِحِيْنَ (100)
اے میرے رب! مجھے ایک صالح (لڑکا) عطا کر۔
فَبَشَّرْنَاهُ بِغُلَامٍ حَلِيْـمٍ (101)
پس ہم نے اسے ایک لڑکے حلم والے کی خوشخبری دی۔
فَلَمَّا بَلَـغَ مَعَهُ السَّعْىَ قَالَ يَا بُنَىَّ اِنِّـىٓ اَرٰى فِى الْمَنَامِ اَنِّـىٓ اَذْبَحُكَ فَانْظُرْ مَاذَا تَـرٰى ۚ قَالَ يَآ اَبَتِ افْعَلْ مَا تُؤْمَرُ ۖ سَتَجِدُنِـىٓ اِنْ شَآءَ اللّـٰهُ مِنَ الصَّابِـرِيْنَ (102)
پھر جب وہ اس کے ہمراہ چلنے پھرنے لگا کہا اے بیٹے! بے شک میں خواب میں دیکھتا ہوں کہ میں تجھے ذبح کر رہا ہوں پس دیکھ تیری کیا رائے ہے، کہا اے ابا! جو حکم آپ کو ہوا ہے کر دیجیے، آپ مجھے ان شا اللہ صبر کرنے والوں میں پائیں گے۔
فَلَمَّآ اَسْلَمَا وَتَلَّـهٝ لِلْجَبِيْنِ (103)
پس جب دونوں نے تسلیم کر لیا اور اس نے پیشانی کے بل ڈال دیا۔
وَنَادَيْنَاهُ اَنْ يَّـآ اِبْـرَاهِـيْمُ (104)
اور ہم نے اسے پکارا کہ اے ابراھیم!۔
قَدْ صَدَّقْتَ الرُّؤْيَا ۚ اِنَّا كَذٰلِكَ نَجْزِى الْمُحْسِنِيْنَ (105)
تو نے خواب سچا کر دکھایا، بے شک ہم اسی طرح نیکو کاروں کو بدلہ دیا کرتے ہیں۔
اِنَّ هٰذَا لَـهُوَ الْبَلَآءُ الْمُبِيْنُ (106)
البتہ یہ صریح آزمائش ہے۔
وَفَدَيْنَاهُ بِذِبْـحٍ عَظِـيْمٍ (107)
اور ہم نے ایک بڑا ذبیحہ اس کے عوض دیا۔
وَتَـرَكْنَا عَلَيْهِ فِى الْاٰخِرِيْنَ (108)
اور ہم نے پیچھے آنے والوں میں یہ بات ان کے لیے رہنے دی۔
سَلَامٌ عَلٰٓى اِبْـرَاهِـيْمَ (109)
ابراہیم پر سلام ہو۔
كَذٰلِكَ نَجْزِى الْمُحْسِنِيْنَ (110)
اسی طرح ہم نیکو کاروں کو بدلہ دیا کرتے ہیں۔
اِنَّهٝ مِنْ عِبَادِنَا الْمُؤْمِنِيْنَ (111)
بے شک وہ ہمارے ایماندار بندوں میں سے تھے۔
وَبَشَّرْنَاهُ بِاِسْحَاقَ نَبِيًّا مِّنَ الصَّالِحِيْنَ (112)
اور ہم نے اسے اسحاق کی بشارت دی کہ وہ نبی (اور) نیک لوگوں میں سے ہوگا۔
وَبَارَكْنَا عَلَيْهِ وَعَلٰٓى اِسْحَاقَ ۚ وَمِنْ ذُرِّيَّتِهِمَا مُحْسِنٌ وَّّظَالِمٌ لِّنَفْسِهٖ مُبِيْنٌ (113)
اور ہم نے ابراہیم اور اسحاق پر برکتیں نازل کیں، اور ان کی اولاد میں سے کوئی نیک بھی ہیں اور کوئی اپنے آپ پر کھلم کھلا ظلم کرنے والے ہیں۔
وَلَقَدْ مَنَنَّا عَلٰى مُوْسٰى وَهَارُوْنَ (114)
اور البتہ ہم نے موسٰی اور ہارون پر احسان کیا۔
وَنَجَّيْنَاهُمَا وَقَوْمَهُمَا مِنَ الْكَرْبِ الْعَظِيْـمِ (115)
اور ہم نے ان دونوں کو اور ان کی قوم کو بڑی مصیبت سے نجات دی۔
وَنَصَرْنَاهُـمْ فَكَانُـوْا هُـمُ الْغَالِبِيْنَ (116)
اور ہم نے ان کی مدد کی پس وہی غالب رہے۔
وَاٰتَيْنَاهُمَا الْكِتَابَ الْمُسْتَبِيْنَ (117)
اور ہم نے ان دونوں کو واضح کتاب دی۔
وَهَدَيْنَاهُمَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِـيْمَ (118)
اور ہم نے دونوں کو راہِ راست پر چلایا۔
وَتَـرَكْنَا عَلَيْـهِمَا فِى الْاٰخِرِيْنَ (119)
اور ان کے لیے آئندہ نسلوں میں یہ باقی رکھا۔
سَلَامٌ عَلٰى مُوْسٰى وَهَارُوْنَ (120)
کہ موسٰی اور ہارون پر سلام ہو۔
اِنَّا كَذٰلِكَ نَجْزِى الْمُحْسِنِيْنَ (121)
بے شک ہم اسی طرح نیکو کاروں کو بدلہ دیا کرتے ہیں۔
اِنَّهُمَا مِنْ عِبَادِنَا الْمُؤْمِنِيْنَ (122)
بے شک وہ دونوں ہمارے ایماندار بندوں میں سے تھے۔
وَاِنَّ اِلْيَاسَ لَمِنَ الْمُرْسَلِيْنَ (123)
اور بے شک الیاس رسولوں میں سے تھا۔
اِذْ قَالَ لِقَوْمِهٓ ٖ اَلَا تَتَّقُوْنَ (124)
جب کہ اس نے اپنی قوم سے کہا کیا تم ڈرتے نہیں۔
اَتَدْعُوْنَ بَعْلًا وَّتَذَرُوْنَ اَحْسَنَ الْخَالِقِيْنَ (125)
کیا تم بعل کو پکارتے ہو اور سب سے بہتر بنانے والے کو چھوڑ دیتے ہو۔
اَللَّهَ رَبَّكُمْ وَرَبَّ اٰبَـآئِكُمُ الْاَوَّلِيْنَ (126)
اللہ کو جو تمہارا رب ہے اور تمہارے پہلے باپ دادوں کا رب ہے۔
فَكَـذَّبُوْهُ فَاِنَّـهُـمْ لَمُحْضَرُوْنَ (127)
پس انہوں نے اس کو جھٹلایا پس بے شک وہ حاضر کیے جائیں گے۔
اِلَّا عِبَادَ اللّـٰهِ الْمُخْلَصِيْنَ (128)
مگر جو اللہ کے خالص بندے ہیں۔
وَتَـرَكْنَا عَلَيْهِ فِى الْاٰخِرِيْنَ (129)
اور ہم نے اس پر پچھلے لوگوں میں چھوڑا۔
سَلَامٌ عَلٰٓى اِلْ يَاسِيْنَ (130)
کہ الیاس پر سلام ہو۔
اِنَّا كَذٰلِكَ نَجْزِى الْمُحْسِنِيْنَ (131)
بے شک ہم اسی طرح نیکو کاروں کو بدلہ دیا کرتے ہیں۔
اِنَّهٝ مِنْ عِبَادِنَا الْمُؤْمِنِيْنَ (132)
بے شک وہ ہمارے ایماندار بندوں میں سے تھا۔
وَاِنَّ لُوْطًا لَّمِنَ الْمُرْسَلِيْنَ (133)
اور بے شک لوط بھی رسولوں میں سے تھا۔
اِذْ نَجَّيْنَاهُ وَاَهْلَهٝٓ اَجْـمَعِيْنَ (134)
جب کہ ہم نے اس کو اور اس کے سب گھر والوں کو نجات دی۔
اِلَّا عَجُوْزًا فِى الْغَابِـرِيْنَ (135)
مگر ایک بڑھیا کو جو عذاب پانے والوں میں رہ گئی۔
ثُـمَّ دَمَّرْنَا الْاٰخَرِيْنَ (136)
پھر ہم نے دوسروں کو ہلاک کر دیا۔
وَاِنَّكُمْ لَتَمُرُّوْنَ عَلَيْـهِـمْ مُّصْبِحِيْنَ (137)
اور بے شک تم ان کے پاس سے صبح کے وقت گزرتے ہو۔
وَبِاللَّيْلِ ۗ اَفَلَا تَعْقِلُوْنَ (138)
اور رات میں بھی، پس کیا تم عقل نہیں رکھتے۔
وَاِنَّ يُوْنُسَ لَمِنَ الْمُرْسَلِيْنَ (139)
اور بے شک یونس بھی رسولوں میں سے تھا۔
اِذْ اَبَقَ اِلَى الْفُلْكِ الْمَشْحُوْنِ (140)
جب کہ وہ بھاگ گیا اس کشتی کی طرف جو بھری ہوئی تھی۔
فَسَاهَمَ فَكَانَ مِنَ الْمُدْحَضِيْنَ (141)
پھر قرعہ ڈالا تو وہی خطا کاروں میں تھا۔
فَالْتَقَمَهُ الْحُوْتُ وَهُوَ مُلِـيْمٌ (142)
پھر اسے مچھلی نے لقمہ بنا لیا اور وہ پشیمان تھا۔
فَلَوْلَآ اَنَّهٝ كَانَ مِنَ الْمُسَبِّحِيْنَ (143)
پس اگر یہ بات نہ ہوتی کہ وہ تسبیح کرنے والوں میں سے تھا۔
لَلَبِثَ فِىْ بَطْنِهٖ اِلٰى يَوْمِ يُبْعَثُوْنَ (144)
تو وہ اس کے پیٹ میں اس دن تک رہتا جس میں لوگ اٹھائے جائیں گے۔
فَنَبَذْنَاهُ بِالْعَرَآءِ وَهُوَ سَقِـيْمٌ (145)
پھر ہم نے اسے میدان میں ڈال دیا اور وہ بیمار تھا۔
وَاَنْبَتْنَا عَلَيْهِ شَجَرَةً مِّنْ يَّقْطِيْنٍ (146)
اور ہم نے اس پر ایک درخت بیل دار اگا دیا۔
وَاَرْسَلْنَاهُ اِلٰى مِائَةِ اَلْفٍ اَوْ يَزِيْدُوْنَ (147)
اور ہم نے اس کو ایک لاکھ یا اس سے زیادہ لوگوں کے پاس بھیجا۔
فَاٰمَنُـوْا فَمَتَّعْنَاهُـمْ اِلٰى حِيْنٍ (148)
پس وہ لوگ ایمان لائے پھر ہم نے انہیں ایک وقت تک فائدہ اٹھانے دیا۔
فَاسْتَفْتِـهِـمْ اَلِرَبِّكَ الْبَنَاتُ وَلَـهُـمُ الْبَنُـوْنَ (149)
پس ان سے پوچھیے کیا آپ کے رب کے لیے تو لڑکیا ں ہیں اور ان کے لیے لڑکے۔
اَمْ خَلَقْنَا الْمَلَآئِكَـةَ اِنَاثًا وَّهُـمْ شَاهِدُوْنَ (150)
کیا ہم نے فرشتوں کو عورتیں بنایا ہے اور وہ دیکھ رہے تھے۔
اَلَآ اِنَّـهُـمْ مِّنْ اِفْكِـهِـمْ لَيَقُوْلُوْنَ (151)
خبرادر! بے شک وہ اپنے جھوٹ سے کہتے ہیں۔
وَلَـدَ اللّـٰهُ وَاِنَّـهُـمْ لَكَاذِبُوْنَ (152)
کہ اللہ کی اولاد ہے اور بے شک وہ جھوٹے ہیں۔
اَصْطَفَى الْبَنَاتِ عَلَى الْبَنِيْنَ (153)
کیا اس نے بیٹیوں کو بیٹوں سے زیادہ پسند کیا ہے۔
مَا لَكُمْ كَيْفَ تَحْكُمُوْنَ (154)
تمہیں کیا ہوا کیسا فیصلہ کرتے ہو۔
اَفَلَا تَذَكَّرُوْنَ (155)
پس کیا تم غور نہیں کرتے۔
اَمْ لَكُمْ سُلْطَانٌ مُّبِيْنٌ (156)
یا تمہارے پاس کوئی واضح دلیل ہے۔
فَاْتُوْا بِكِـتَابِكُمْ اِنْ كُنْتُـمْ صَادِقِيْنَ (157)
پس اپنی کتاب لے آؤ اگر تم سچے ہو۔
وَجَعَلُوْا بَيْنَهٝ وَبَيْنَ الْجِنَّـةِ نَسَبًا ۚ وَلَقَدْ عَلِمَتِ الْجِنَّـةُ اِنَّـهُـمْ لَمُحْضَرُوْنَ (158)
اور انہوں نے اس کے اور جنوں کے درمیان رشتہ قائم کر دیا ہے، اور جنوں کو معلوم ہے کہ وہ ضرور حاضر کیے جائیں گے۔
سُبْحَانَ اللّـٰهِ عَمَّا يَصِفُوْنَ (159)
اللہ پا ک ہے ان باتو ں سے جو وہ بناتے ہیں۔
اِلَّا عِبَادَ اللّـٰهِ الْمُخْلَصِيْنَ (160)
مگر اللہ کے خاص بندے۔
فَاِنَّكُمْ وَمَا تَعْبُدُوْنَ (161)
پس بے شک تم اور جنہیں تم پوجتے ہو۔
مَآ اَنْتُـمْ عَلَيْهِ بِفَاتِنِيْنَ (162)
کسی کو گمراہ نہیں کر سکتے۔
اِلَّا مَنْ هُوَ صَالِ الْجَحِيْـمِ (163)
مگر اسی کو جو دوزخ میں جانے والا ہے۔
وَمَا مِنَّـآ اِلَّا لَـهٝ مَقَامٌ مَّعْلُوْمٌ (164)
اور ہم میں سے کوئی بھی ایسا نہیں کہ جس کے لیے ایک درجہ معین نہ ہو۔
وَاِنَّا لَنَحْنُ الصَّآفُّوْنَ (165)
اور بے شک ہم صف باندھے کھڑے رہنے والے ہیں۔
وَاِنَّا لَنَحْنُ الْمُسَبِّحُوْنَ (166)
اور بے شک ہم ہی تسبیح کرنے والے ہیں۔
وَاِنْ كَانُـوْا لَيَقُوْلُوْنَ (167)
اور وہ تو کہا کرتے تھے۔
لَوْ اَنَّ عِنْدَنَا ذِكْرًا مِّنَ الْاَوَّلِيْنَ (168)
اگر ہمارے پاس پہلے لوگوں کی کتاب ہوتی۔
لَكُنَّا عِبَادَ اللّـٰهِ الْمُخْلَصِيْنَ (169)
تو ہم اللہ کے خالص بندے ہوتے۔
فَكَـفَرُوْا بِهٖ ۖ فَسَوْفَ يَعْلَمُوْنَ (170)
پس انہوں نے اس کا انکار کیا، سو وہ جان لیں گے۔
وَلَقَدْ سَبَقَتْ كَلِمَتُنَا لِعِبَادِنَا الْمُرْسَلِيْنَ (171)
اور ہمارا حکم ہمارے بندوں کے حق میں جو رسول ہیں پہلے سے ہو چکا ہے۔
اِنَّـهُـمْ لَـهُـمُ الْمَنْصُوْرُوْنَ (172)
بے شک وہی مدد دیے جائیں گے۔
وَاِنَّ جُنْدَنَا لَـهُـمُ الْغَالِبُوْنَ (173)
اور بے شک ہمارا لشکر ہی غالب رہے گا۔
فَتَوَلَّ عَنْـهُـمْ حَتّـٰى حِيْنٍ (174)
پھر آپ ان سے کچھ مدت تک منہ موڑ لیجیے۔
وَاَبْصِرْهُـمْ فَسَوْفَ يُبْصِرُوْنَ (175)
اور انہیں دیکھتے رہیے پس وہ بھی دیکھ لیں گے۔
اَفَبِعَذَابِنَا يَسْتَعْجِلُوْنَ (176)
کیا وہ ہمارا عذاب جلدی مانگتے ہیں۔
فَاِذَا نَزَلَ بِسَاحَتِـهِـمْ فَسَآءَ صَبَاحُ الْمُنْذَرِيْنَ (177)
پس جب ان کے میدان میں آ نازل ہوگا تو کیسی بری صبح ہوگی ان کی جو ڈرائے گئے۔
وَتَوَلَّ عَنْـهُـمْ حَتّـٰى حِيْنٍ (178)
اور ان سے کچھ مدت منہ موڑ لیجیے۔
وَاَبْصِرْ فَسَوْفَ يُبْصِرُوْنَ (179)
اور دیکھتے رہیے سو وہ بھی دیکھ لیں گے۔
سُبْحَانَ رَبِّكَ رَبِّ الْعِزَّةِ عَمَّا يَصِفُوْنَ (180)
آپ کا رب پاک ہے عزت کا مالک ان باتوں سے جو وہ بیان کرتے ہیں۔
وَسَلَامٌ عَلَى الْمُرْسَلِيْنَ (181)
اور رسولوں پر سلام ہو۔
وَالْحَـمْدُ لِلّـٰهِ رَبِّ الْعَالَمِيْنَ (182)
اور سب تعریف اللہ کے لیے ہے جو سارے جہان کا رب ہے۔