قرآن حکیم            

مکمل سورت
سورت نمبر
آیت نمبر
ایک آیت
(34) سورۃ سبا (مکی، آیات 54)
بِسْمِ اللّـٰهِ الرَّحْـمٰنِ الرَّحِيْـمِ
اَلْحَـمْدُ لِلّـٰهِ الَّـذِىْ لَـهٝ مَا فِى السَّمَاوَاتِ وَمَا فِى الْاَرْضِ وَلَـهُ الْحَـمْدُ فِى الْاٰخِرَةِ ۚ وَهُوَ الْحَكِـيْـمُ الْخَبِيْـرُ (1)
سب تعریف اللہ ہی کے لیے ہے جو کچھ آسمانوں اور زمین میں ہے سب اسی کا ہے اور آخرت میں بھی اسی کے لیے سب تعریف ہے، اور وہ حکمت والا خبردار ہے۔
يَعْلَمُ مَا يَلِجُ فِى الْاَرْضِ وَمَا يَخْرُجُ مِنْـهَا وَمَا يَنْزِلُ مِنَ السَّمَآءِ وَمَا يَعْرُجُ فِيْـهَا ۚ وَهُوَ الرَّحِيْـمُ الْغَفُوْرُ (2)
وہ جانتا ہے جو زمین میں داخل ہوتا ہے اور جو اس میں سے نکلتا ہے اور جو آسمان سے نازل ہوتا ہے اور جو اس میں چڑھتا ہے، اور وہ نہایت رحم والا بخشنے والا ہے۔
وَقَالَ الَّـذِيْنَ كَفَرُوْا لَا تَاْتِيْنَا السَّاعَةُ ؕ قُلْ بَلٰى وَرَبِّىْ لَتَاْتِيَنَّكُمْ عَالِمِ الْغَيْبِ ۖ لَا يَعْزُبُ عَنْهُ مِثْقَالُ ذَرَّةٍ فِى السَّمَاوَاتِ وَلَا فِى الْاَرْضِ وَلَآ اَصْغَرُ مِنْ ذٰلِكَ وَلَآ اَكْبَـرُ اِلَّا فِىْ كِتَابٍ مُّبِيْنٍ (3)
اور کافر کہتے ہیں کہ ہم پر قیامت نہیں آئے گی، کہہ دو ہاں (آئے گی) قسم ہے میرے رب غائب کے جاننے والے کی البتہ تم پر ضرور آئے گی، جس سے آسمانوں اور زمین کی کوئی چیز ذرہ کے برابر بھی غائب نہیں اور نہ ذرہ سے چھوٹی اور نہ بڑی کوئی بھی ایسی چیز نہیں جو لوح محفوظ میں نہ ہو۔
لِّيَجْزِىَ الَّـذِيْنَ اٰمَنُـوْا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ ۚ اُولٰٓئِكَ لَـهُـمْ مَّغْفِرَةٌ وَّّرِزْقٌ كَرِيْـمٌ (4)
تاکہ اللہ ان لوگوں کو جزا دے جو ایمان لائے اور انہوں نے نیک عمل کیے، انہیں کے لیے بخشش اور عزت والا رزق ہے۔
وَالَّـذِيْنَ سَعَوْا فِىٓ اٰيَاتِنَا مُعَاجِزِيْنَ اُولٰٓئِكَ لَـهُـمْ عَذَابٌ مِّنْ رِّجْزٍ اَلِيْـمٌ (5)
اور جو ہماری آیتوں کے رد کرنے میں کوشش کرتے پھرتے ہیں ان کے لیے ذلت کا عذاب ہے۔
وَيَرَى الَّـذِيْنَ اُوْتُوا الْعِلْمَ الَّـذِىٓ اُنْزِلَ اِلَيْكَ مِنْ رَّبِّكَ هُوَ الْحَقَّ ۙ وَيَـهْدِىٓ اِلٰى صِرَاطِ الْعَزِيْزِ الْحَـمِيْدِ (6)
اور جنہیں علم دیا گیا ہے وہ خیال کرتے ہیں کہ جو کچھ آپ کی طرف آپ کے رب کی طرف سے نازل ہوا ہے وہ ٹھیک ہے، اور وہ غالب تعریف کیے ہوئے کی راہ دکھاتا ہے۔
وَقَالَ الَّـذِيْنَ كَفَرُوْا هَلْ نَدُلُّكُمْ عَلٰى رَجُلٍ يُّنَبِّئُكُمْ اِذَا مُزِّقْتُـمْ كُلَّ مُمَزَّقٍۙ اِنَّكُمْ لَفِىْ خَلْقٍ جَدِيْدٍ (7)
اور کافر کہتے ہیں کیا ہم تمہیں وہ آدمی بتائیں جو تمہیں خبر دیتا ہے کہ جب تم پورے طور پر ریزہ ریزہ ہو جاؤ گے تو پھر نئے سرے سے پیدا کیے جاؤ گے۔
اَفْتَـرٰى عَلَى اللّـٰهِ كَذِبًا اَمْ بِهٖ جِنَّةٌ ؕ بَلِ الَّـذِيْنَ لَا يُؤْمِنُـوْنَ بِالْاٰخِرَةِ فِى الْعَذَابِ وَالضَّلَالِ الْبَعِيْدِ (8)
کیا اس نے اللہ پر جھوٹ بنا لیا ہے یا اسے جنون ہے، نہیں بلکہ جو لوگ آخرت پر یقین نہیں رکھتے وہ عذاب اور دور کی گمراہی میں ہیں۔
اَفَلَمْ يَرَوْا اِلٰى مَا بَيْنَ اَيْدِيْهِـمْ وَمَا خَلْفَهُـمْ مِّنَ السَّمَآءِ وَالْاَرْضِ ۚ اِنْ نَّشَاْ نَخْسِفْ بِـهِـمُ الْاَرْضَ اَوْ نُسْقِطْ عَلَيْـهِـمْ كِسَفًا مِّنَ السَّمَآءِ ۚ اِنَّ فِىْ ذٰلِكَ لَاٰيَةً لِّكُلِّ عَبْدٍ مُّنِيْبٍ (9)
کیا وہ آسمان اور زمین کو نہیں دیکھتے جو ان کے آگے اور پیچھے ہے، اگر ہم چاہیں تو انہیں زمین میں دھنسا دیں یا ان پر کوئی آسمان کا ٹکڑا گرا دیں، اللہ کی طرف رجوع کرنے والے بندے کے لیے اس میں بڑی نشانیاں ہیں۔
وَلَقَدْ اٰتَيْنَا دَاوُوْدَ مِنَّا فَضْلًا ۖ يَا جِبَالُ اَوِّبِىْ مَعَهٝ وَالطَّيْـرَ ۖ وَاَلَنَّا لَـهُ الْحَدِيْدَ (10)
اور بے شک ہم نے داؤد کو اپنی طرف سے بزرگی دی تھی، اے پہاڑو ان کی تسبیح کی آواز کا جواب دیا کرو اور پرندوں کو تابع کر دیا تھا، اور ہم نے ان کے لیے لوہا نرم کر دیا تھا۔
اَنِ اعْمَلْ سَابِغَاتٍ وَّّقَدِّرْ فِى السَّرْدِ ۖ وَاعْمَلُوْا صَالِحًا ۖ اِنِّىْ بِمَا تَعْمَلُوْنَ بَصِيْـرٌ (11)
کہ کشادہ زرہیں بنا اور اندازے سے کڑیاں جوڑ، اور تم سب نیک کام کرو، بے شک میں جو تم کرتے ہو خوب دیکھ رہا ہوں۔
وَلِسُلَيْمَانَ الرِّيْحَ غُدُوُّهَا شَهْرٌ وَّّرَوَاحُهَا شَهْرٌ ۖ وَاَسَلْنَا لَـهٝ عَيْنَ الْقِطْرِ ۖ وَمِنَ الْجِنِّ مَنْ يَّعْمَلُ بَيْنَ يَدَيْهِ بِاِذْنِ رَبِّهٖ ۖ وَمَنْ يَّزِغْ مِنْـهُـمْ عَنْ اَمْرِنَا نُذِقْهُ مِنْ عَذَابِ السَّعِيْـرِ (12)
اور ہوا کو سلیمان کے تابع کر دیا تھا جس کی صبح کی منزل مہینے بھر کی راہ اور شام کی منزل مہینے بھر کی راہ تھی، اور ہم نے اس کے لیے تانبے کا چشمہ بہا دیا تھا، اور کچھ جن اس کے آگے اس کے رب کے حکم سے کام کیا کرتے تھے، اور جو کوئی ان میں سے ہمارے حکم سے پھر جاتا تھا تو ہم اسے آگ کا عذاب چکھاتے تھے۔
يَعْمَلُوْنَ لَـهٝ مَا يَشَآءُ مِنْ مَّحَارِيْبَ وَتَمَاثِيْلَ وَجِفَانٍ كَالْجَوَابِ وَقُدُوْرٍ رَّاسِيَاتٍ ۚ اِعْمَلُوٓا اٰلَ دَاوُوْدَ شُكْـرًا ۚ وَقَلِيْلٌ مِّنْ عِبَادِىَ الشَّكُـوْرُ (13)
جو وہ چاہتا اس کے لیے بناتے تھے قلعے اور تصویریں اور حوض جیسے لگن اور جمی رہنے والی دیگیں، اے داؤد والو تم شکریہ میں نیک کام کیا کرو، اور میرے بندوں میں سے شکر گزار تھوڑے ہیں۔
فَلَمَّا قَضَيْنَا عَلَيْهِ الْمَوْتَ مَا دَلَّـهُـمْ عَلٰى مَوْتِهٓ ٖ اِلَّا دَآبَّةُ الْاَرْضِ تَاْكُلُ مِنْسَاَتَهٝ ۖ فَلَمَّا خَرَّ تَبَيَّنَتِ الْجِنُّ اَنْ لَّوْ كَانُـوْا يَعْلَمُوْنَ الْغَيْبَ مَا لَبِثُوْا فِى الْعَذَابِ الْمُهِيْنِ (14)
پھر جب ہم نے اس پر موت کا حکم کیا تو انہیں اس کی موت کا پتہ نہ دیا مگر گھن کے کیڑے نے جو اس کے عصا کو کھا رہا تھا، پھر جب گر پڑا تو جنوں نے معلوم کیا کہ اگر وہ غیب کو جانتے ہوتے تو اس ذلت کے عذاب میں نہ پڑے رہتے۔
لَقَدْ كَانَ لِسَبَاٍ فِىْ مَسْكَنِـهِـمْ اٰيَةٌ ۚ جَنَّتَانِ عَنْ يَّمِيْنٍ وَّشِمَالٍ ۖ كُلُوْا مِنْ رِّزْقِ رَبِّكُمْ وَاشْكُـرُوْا لَـهٝ ۚ بَلْـدَةٌ طَيِّبَةٌ وَّّرَبٌّ غَفُوْرٌ (15)
بے شک قوم سبا کے لیے ان کی بستی میں ایک نشان تھا، دائیں اور بائیں دو باغ، اپنے رب کی روزی کھاؤ اور اس کا شکر کرو، عمدہ شہر رہنے کو اور بخشنے والا رب۔
فَاَعْرَضُوْا فَاَرْسَلْنَا عَلَيْـهِـمْ سَيْلَ الْعَرِمِ وَبَدَّلْنَاهُـمْ بِجَنَّـتَيْهِـمْ جَنَّـتَيْنِ ذَوَاتَىْ اُكُلٍ خَـمْطٍ وَّاَثْلٍ وَّّشَىْءٍ مِّنْ سِدْرٍ قَلِيْلٍ (16)
پھر انہوں نے نافرمانی کی پھر ہم نے ان پر سخت سیلاب بھیج دیا اور ہم نے ان کے دونوں باغوں کے بدلے میں دو باغ بدمزہ پھل کے اور جھاؤ کے اور کچھ تھوڑی سی بیریوں کے بدل دیے۔
ذٰلِكَ جَزَيْنَاهُـمْ بِمَا كَفَرُوْا ۖ وَهَلْ نُجَازِىٓ اِلَّا الْكَفُوْرَ (17)
یہ ہم نے ان کی ناشکری کا بدلہ دیا اور ہم ناشکروں ہی کو برا بدلہ دیا کرتے ہیں۔
وَجَعَلْنَا بَيْنَـهُـمْ وَبَيْنَ الْقُرَى الَّتِىْ بَارَكْنَا فِيْـهَا قُرًى ظَاهِرَةً وَّّقَدَّرْنَا فِيْـهَا السَّيْـرَ ۖ سِيْـرُوْا فِيْـهَا لَيَالِـىَ وَاَيَّامًا اٰمِنِيْنَ (18)
اور ہم نے ان کے اور ان بستیوں کے درمیان جن میں ہم نے برکت رکھی تھی بہت سے گاؤں آباد کر رکھے تھے جو نظر آتے تھے اور ہم نے ان میں منزلیں مقرر کر دی تھیں، ان میں راتوں اور دنوں کو امن سے چلو۔
فَقَالُوْا رَبَّنَا بَاعِدْ بَيْنَ اَسْفَارِنَا وَظَلَمُوٓا اَنْفُسَهُـمْ فَجَعَلْنَاهُـمْ اَحَادِيْثَ وَمَزَّقْنَاهُـمْ كُلَّ مُمَزَّقٍ ۚ اِنَّ فِىْ ذٰلِكَ لَاٰيَاتٍ لِّكُلِّ صَبَّارٍ شَكُـوْرٍ (19)
پھر انہوں نے کہا اے ہمارے رب ہماری منزلوں کو دور دور کر دے اور انہوں نے اپنی جانوں پر ظلم کیا سو ہم نے انہیں کہانیاں بنا دیا اور ہم نے انہیں پورے طور پر پارہ پارہ کر دیا، بے شک اس میں ہر ایک صبر شکرکرنے والے کے لیے نشانیاں ہیں۔
وَلَقَدْ صَدَّقَ عَلَيْـهِـمْ اِبْلِيْسُ ظَنَّهٝ فَاتَّبَعُوْهُ اِلَّا فَرِيْقًا مِّنَ الْمُؤْمِنِيْنَ (20)
اور البتہ شیطان نے ان پر اپنا گمان سچ کر دکھایا، سوائے ایمان داروں کے ایک گروہ کے سب اس کے تابع ہو گئے۔
وَمَا كَانَ لَـهٝ عَلَيْـهِـمْ مِّنْ سُلْطَانٍ اِلَّا لِنَعْلَمَ مَنْ يُّؤْمِنُ بِالْاٰخِرَةِ مِمَّنْ هُوَ مِنْـهَا فِىْ شَكٍّ ۗ وَرَبُّكَ عَلٰى كُلِّ شَىْءٍ حَفِيْظٌ (21)
حالانکہ ان پر اس کا کوئی زور بھی نہیں تھا مگر یہی کہ ہم نے ظاہر کرنا تھا کون آخرت پر ایمان لاتا ہے اور کون اس سے شک میں پڑا ہوا ہے، اور تیرا رب ہر چیز پر نگہبان ہے۔
قُلِ ادْعُوا الَّـذِيْنَ زَعَمْتُـمْ مِّنْ دُوْنِ اللّـٰهِ ۖ لَا يَمْلِكُـوْنَ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ فِى السَّمَاوَاتِ وَلَا فِى الْاَرْضِ وَمَا لَـهُـمْ فِـيْهِمَا مِنْ شِرْكٍ وَّمَا لَـهٝ مِنْـهُـمْ مِّنْ ظَهِيْـرٍ (22)
کہہ دو اللہ کے سوا جن کا تمہیں گھمنڈ ہے انہیں پکارو، وہ نہ تو آسمان ہی میں ذرہ بھر اختیار رکھتے ہیں اور نہ زمین میں اور نہ ان کا ان میں کچھ حصہ ہے اور نہ ان میں سے اللہ کا کوئی مددگار ہے۔
وَلَا تَنْفَعُ الشَّفَاعَةُ عِنْدَهٝٓ اِلَّا لِمَنْ اَذِنَ لَـهٝ ۚ حَتّــٰٓى اِذَا فُزِّعَ عَنْ قُلُوْبِـهِـمْ قَالُوْا مَاذَا قَالَ رَبُّكُمْ ۖ قَالُوا الْحَقَّ ۖ وَهُوَ الْعَلِـىُّ الْكَبِيْـرُ (23)
اور اس کے ہاں سفارش نفع نہ دے گی مگر اسی کو جس کے لیے وہ اجازت دے گا، یہاں تک کہ جب ان کے دل سے گھبراہٹ دور ہوجاتی ہے کہتے ہیں تمہارے رب نے کیا فرمایا، وہ کہتے ہیں سچی بات فرمائی، اور وہی عالیشان اور سب سے بڑا ہے۔
قُلْ مَنْ يَّرْزُقُكُمْ مِّنَ السَّمَاوَاتِ وَالْاَرْضِ ۖ قُلِ اللّـٰهُ ۖ وَاِنَّـآ اَوْ اِيَّاكُمْ لَعَلٰى هُدًى اَوْ فِىْ ضَلَالٍ مُّبِيْنٍ (24)
کہہ دو تمہیں آسمانوں اور زمین سے کون رزق دیتا ہے، کہو اللہ، اور بے شک ہم یا تم ہدایت پر ہیں یا صریح گمراہی میں۔
قُلْ لَّا تُسْاَلُوْنَ عَمَّآ اَجْرَمْنَا وَلَا نُسْاَلُ عَمَّا تَعْمَلُوْنَ (25)
کہہ دو نہ تم پوچھے جاؤ گے اس کی نسبت جو ہم نے جرم کیا ہے اور نہ ہم ہی پوچھے جائیں گے اس کی بابت جو تم کرتے ہو۔
قُلْ يَجْـمَعُ بَيْنَنَا رَبُّنَا ثُـمَّ يَفْتَحُ بَيْنَنَا بِالْحَقِّ وَهُوَ الْفَتَّاحُ الْعَلِيْـمُ (26)
کہہ دو ہم سب کو ہمارا رب جمع کرے گا پھر ہمارے درمیان انصاف سے فیصلہ کرے گا اور وہی فیصلہ کرنے والا جاننے والا ہے۔
قُلْ اَرُوْنِىَ الَّـذِيْنَ اَلْحَقْتُـمْ بِهٖ شُرَكَآءَ ۖ كَلَّا ۚ بَلْ هُوَ اللّـٰهُ الْعَزِيْزُ الْحَكِـيْمُ (27)
کہہ دو جنہیں تم نے اس سے شریک بنا کر ملا رکھا ہے، مجھے بھی تو دکھاؤ، بلکہ وہی اللہ غالب حکمت والا ہے۔
وَمَآ اَرْسَلْنَاكَ اِلَّا كَآفَّـةً لِّلنَّاسِ بَشِيْـرًا وَّنَذِيْـرًا وَّلٰكِنَّ اَكْثَرَ النَّاسِ لَا يَعْلَمُوْنَ (28)
اور ہم نے آپ کو جو بھیجا ہے تو صرف سب لوگوں کو خوشی اور ڈر سنانے کے لیے لیکن اکثر لوگ نہیں جانتے۔
وَيَقُوْلُوْنَ مَتٰى هٰذَا الْوَعْدُ اِنْ كُنْتُـمْ صَادِقِيْنَ (29)
اور کہتے ہیں یہ وعدہ کب ہے اگر تم سچے ہو۔
قُلْ لَّكُمْ مِّيْعَادُ يَوْمٍ لَّا تَسْتَاْخِرُوْنَ عَنْهُ سَاعَةً وَّّلَا تَسْتَقْدِمُوْنَ (30)
کہہ دو تمہارے لیے ایک دن کا وعدہ ہے کہ جس سے نہ ایک گھڑی پیچھے ہو سکتے ہو اور نہ آگے بڑھ سکتے ہو۔
وَقَالَ الَّـذِيْنَ كَفَرُوْا لَنْ نُّؤْمِنَ بِـهٰذَا الْقُرْاٰنِ وَلَا بِالَّـذِىْ بَيْنَ يَدَيْهِ ۗ وَلَوْ تَـرٰٓى اِذِ الظَّالِمُوْنَ مَوْقُوْفُوْنَ عِنْدَ رَبِّهِـمْۚ يَرْجِــعُ بَعْضُهُـمْ اِلٰى بَعْضِ ِۨ الْقَوْلَۚ يَقُوْلُ الَّـذِيْنَ اسْتُضْعِفُوْا لِلَّـذِيْنَ اسْتَكْـبَـرُوْا لَوْلَآ اَنْتُـمْ لَكُنَّا مُؤْمِنِيْنَ (31)
اور کافر کہتے ہیں ہم اس قرآن پر ہرگز ایمان نہیں لائیں گے اور نہ اس پر جو اس سے پہلے موجود ہے، اور کاش آپ دیکھتے جب کہ ظالم اپنے رب کے حضور میں کھڑے کیے جائیں گے، ایک ان میں سے دوسرے کی بات کو رد کر رہا ہوگا، جو لوگ کمزور سمجھے جاتے تھے وہ ان سے کہیں گے جو بڑے بنتے تھے کہ اگر تم نہ ہوتے تو ہم ایمان دار ہوتے۔
قَالَ الَّـذِيْنَ اسْتَكْـبَـرُوْا لِلَّـذِيْنَ اسْتُضْعِفُوْا اَنَحْنُ صَدَدْنَاكُمْ عَنِ الْـهُدٰى بَعْدَ اِذْ جَآءَكُمْ ۖ بَلْ كُنْتُـمْ مُّجْرِمِيْنَ (32)
جو لوگ بڑے بنتے تھے ان سے کہیں گے جو کمزور سمجھے جاتے تھے کیا ہم نے تمہیں ہدایت سے روکا تھا بعد اس کے کہ وہ تمہارے پاس آچکی تھی، بلکہ تم خود ہی مجرم تھے۔
وَقَالَ الَّـذِيْنَ اسْتُضْعِفُوْا لِلَّـذِيْنَ اسْتَكْـبَـرُوْا بَلْ مَكْـرُ اللَّيْلِ وَالنَّـهَارِ اِذْ تَاْمُرُوْنَنَآ اَنْ نَّكْـفُرَ بِاللّـٰهِ وَنَجْعَلَ لَـهٝٓ اَنْدَادًا ۚ وَاَسَرُّوا النَّدَامَةَ لَمَّا رَاَوُا الْعَذَابَ ؕ وَجَعَلْنَا الْاَغْلَالَ فِىٓ اَعْنَاقِ الَّـذِيْنَ كَفَرُوْا ۚ هَلْ يُجْزَوْنَ اِلَّا مَا كَانُـوْا يَعْمَلُوْنَ (33)
اور جو لوگ کمزور سمجھے جاتے تھے وہ ان سے کہیں گے جو متکبر تھے بلکہ (تمہارے) رات اور دن کے فریب نے جب تم ہمیں حکم دیا کرتے تھے کہ ہم اللہ کا انکار کر دیں اوراس کے لیے شریک ٹھہرائیں، اور دل میں بڑے پشیمان ہوں گے جب عذاب کو سامنے دیکھیں گے، اور کافروں کی گردنوں میں ہم طوق ڈالیں گے، جو کچھ وہ کیا کرتے تھے اسی کا تو بدلہ پا رہے ہیں۔
وَمَآ اَرْسَلْنَا فِىْ قَرْيَةٍ مِّنْ نَّذِيْـرٍ اِلَّا قَالَ مُتْـرَفُوْهَآ اِنَّـا بِمَآ اُرْسِلْتُـمْ بِهٖ كَافِرُوْنَ (34)
اور ہم نے جس کسی بستی میں کوئی ڈرانے والا بھیجا تو وہاں کے دولتمندوں نے یہی کہا کہ تم جو لے کر آئے ہو ہم نہیں مانتے۔
وَقَالُوْا نَحْنُ اَكْثَرُ اَمْوَالًا وَّاَوْلَادًا وَّمَا نَحْنُ بِمُعَذَّبِيْنَ (35)
اور یہ بھی کہا کہ ہم مال اور اولاد میں تم سے بڑھ کر ہیں اور ہمیں کوئی عذاب نہ دیا جائے گا۔
قُلْ اِنَّ رَبِّىْ يَبْسُطُ الرِّزْقَ لِمَنْ يَّشَآءُ وَيَقْدِرُ وَلٰكِنَّ اَكْثَرَ النَّاسِ لَا يَعْلَمُوْنَ (36)
کہہ دو میرا رب جس کے لیے چاہتا ہے روزی کشادہ کر دیتا ہے اور کم کر دیتا ہے اور لیکن اکثر آدمی نہیں جانتے۔
وَمَآ اَمْوَالُكُمْ وَلَآ اَوْلَادُكُمْ بِالَّتِىْ تُقَرِّبُكُمْ عِنْدَنَا زُلْفٰٓى اِلَّا مَنْ اٰمَنَ وَعَمِلَ صَالِحًاۚ فَاُولٰٓئِكَ لَـهُـمْ جَزَآءُ الضِّعْفِ بِمَا عَمِلُوْا وَهُـمْ فِى الْغُرُفَاتِ اٰمِنُـوْنَ (37)
اور تمہاے مال اور اولاد ایسی چیز نہیں جو تمہیں مرتبہ میں ہمارے قریب کر دے مگر جو ایمان لایا اور نیک کام کیے، پس وہی لوگ ہیں جن کے لیے دگنا بدلہ ہے اس کا جو انہوں نے کیا اور وہی بالاخانوں میں امن سے ہوں گے۔
وَالَّـذِيْنَ يَسْعَوْنَ فِىٓ اٰيَاتِنَا مُعَاجِزِيْنَ اُولٰٓئِكَ فِى الْعَذَابِ مُحْضَرُوْنَ (38)
اور وہ جو ہماری آیتوں کے رد کرنے میں کوشش کرتے ہیں وہ عذاب میں پکڑ کر حاضر کیے جائیں گے۔
قُلْ اِنَّ رَبِّىْ يَبْسُطُ الرِّزْقَ لِمَنْ يَّشَآءُ مِنْ عِبَادِهٖ وَيَقْدِرُ لَـهٝ ۚ وَمَآ اَنْفَقْتُـمْ مِّنْ شَىْءٍ فَهُوَ يُخْلِفُهٝ ۖ وَهُوَ خَيْـرُ الرَّازِقِيْنَ (39)
کہہ دو بے شک میرا رب ہی اپنے بندوں میں سے جسے چاہے روزی کشادہ کر دیتا ہے اور جسے چاہے تنگ کر دیتا ہے، اور جو کوئی چیز بھی تم خرچ کرتے ہو سو وہی اس کا عوض دیتا ہے، اور وہ سب سے بہتر روزی دینے والا ہے۔
وَيَوْمَ يَحْشُرُهُـمْ جَـمِيْعًا ثُـمَّ يَقُوْلُ لِلْمَلَآئِكَـةِ اَهٰٓؤُلَآءِ اِيَّاكُمْ كَانُـوْا يَعْبُدُوْنَ (40)
اور جس دن وہ ان سب کو جمع کرے گا پھر فرشتوں سے فرمائے گا کیا یہی ہیں جو تمہاری عبادت کیا کرتے تھے۔
قَالُوْا سُبْحَانَكَ اَنْتَ وَلِيُّنَا مِنْ دُوْنِـهِـمْ ۖ بَلْ كَانُـوْا يَعْبُدُوْنَ الْجِنَّ ۖ اَكْثَرُهُـمْ بِـهِـمْ مُّؤْمِنُـوْنَ (41)
وہ عرض کریں گے تو پاک ہے ہمارا تو تجھ سے ہی تعلق ہے نہ کہ ان سے، بلکہ یہ شیطانوں کی عبادت کرتے تھے، ان میں سے اکثر انہیں کے معتقد تھے۔
فَالْيَوْمَ لَا يَمْلِكُ بَعْضُكُمْ لِبَعْضٍ نَّفْعًا وَّلَا ضَرًّاۚ وَنَقُوْلُ لِلَّـذِيْنَ ظَلَمُوْا ذُوْقُوْا عَذَابَ النَّارِ الَّتِىْ كُنْتُـمْ بِـهَا تُكَذِّبُوْنَ (42)
پھر آج تم میں سے کوئی کسی کے نفع اور نقصان کا مالک نہیں، اور ہم ظالموں سے کہیں گے تم اس آگ کا عذاب چکھو جسے تم جھٹلایا کرتے تھے۔
وَاِذَا تُـتْلٰى عَلَيْـهِـمْ اٰيَاتُنَا بَيِّنَاتٍ قَالُوْا مَا هٰذَآ اِلَّا رَجُلٌ يُّرِيْدُ اَنْ يَّصُدَّكُمْ عَمَّا كَانَ يَعْبُدُ اٰبَآؤُكُمْۚ وَقَالُوْا مَا هٰذَآ اِلَّآ اِفْكٌ مُّفْتَـرًى ۚ وَقَالَ الَّـذِيْنَ كَفَرُوْا لِلْحَقِّ لَمَّا جَآءَهُـمْ اِنْ هٰذَآ اِلَّا سِحْرٌ مُّبِيْنٌ (43)
اور جب انہیں ہماری واضح آیتیں سنائی جاتی ہیں تو کہتے ہیں کہ یہ محض ایسا شخص ہے جو چاہتا ہے کہ تمہیں ان چیزوں سے روک دے جنہیں تمہارے باپ دادا پوجتے تھے، اور (قرآن کی نسبت) کہتے ہیں کہ یہ محض ایک تراشا ہوا جھوٹ ہے، اور کافروں نے حق کے متعلق کہا جب ان کے پاس آیا کہ یہ محض ایک صریح جادو ہے۔
وَمَآ اٰتَيْنَاهُـمْ مِّنْ كُتُبٍ يَّدْرُسُوْنَـهَا ۖ وَمَآ اَرْسَلْنَآ اِلَيْـهِـمْ قَبْلَكَ مِنْ نَّذِيْـرٍ (44)
اور ہم نے انہیں کوئی کتاب نہیں دی کہ وہ اسے پڑھتے ہوں، اور ہم نے ان کی طرف آپ سے پہلے کوئی ڈرانے والا نہیں بھیجا۔
وَكَذَّبَ الَّـذِيْنَ مِنْ قَبْلِـهِـمْ وَمَا بَلَغُوْا مِعْشَارَ مَآ اٰتَيْنَاهُـمْ فَكَذَّبُوْا رُسُلِـىْ ۖ فَكَـيْفَ كَانَ نَكِـيْـرِ (45)
اور ان لوگوں نے بھی جھٹلایا جو ان سے پہلے تھے اور یہ لوگ اس کے دسویں حصہ کو نہیں پہنچے جو ہم نے انہیں دیا تھا پس انہوں نے میرے رسولوں کو جھٹلایا، پھر میرا کیسا عذاب ہوا۔
قُلْ اِنَّمَآ اَعِظُكُمْ بِوَاحِدَةٍ ۖ اَنْ تَقُوْمُوْا لِلّـٰهِ مَثْنٰى وَفُرَادٰى ثُـمَّ تَتَفَكَّـرُوْا ۚ مَا بِصَاحِبِكُمْ مِّنْ جِنَّـةٍ ۚ اِنْ هُوَ اِلَّا نَذِيْرٌ لَّكُمْ بَيْنَ يَدَىْ عَذَابٍ شَدِيْدٍ (46)
کہہ دو میں تمہیں ایک بات نصیحت کرتا ہوں کہ تم اللہ کے لیے دو دو ایک ایک کھڑے ہو کر غور کرو کہ تمہارے اس ساتھی کو جنون تو نہیں ہے، وہ تمہیں ایک سخت عذاب آنے سے پہلے ڈرانے والا ہے۔
قُلْ مَا سَاَلْتُكُمْ مِّنْ اَجْرٍ فَهُوَ لَكُمْ ۖ اِنْ اَجْرِىَ اِلَّا عَلَى اللّـٰهِ ۖ وَهُوَ عَلٰى كُلِّ شَىْءٍ شَهِيْدٌ (47)
کہہ دو اس پر جو اجرت میں نے تم سے مانگی ہو وہ تمہارے ہی پاس رہے، میری مزدوری تو اللہ ہی پر ہے، اور وہ ہر چیز پر گواہ ہے۔
قُلْ اِنَّ رَبِّىْ يَقْذِفُ بِالْحَقِّ عَلَّامُ الْغُيُوْبِ (48)
کہہ دو میرا رب سچا دین برسا رہا ہے اور وہ چھپی ہوئی چیزوں کو خوب جانتا ہے۔
قُلْ جَآءَ الْحَقُّ وَمَا يُبْدِئُ الْبَاطِلُ وَمَا يُعِيْدُ (49)
کہہ دو حق آ گیا ہے اور جھوٹے معبود نہ پہلی بار پیدا کرتے ہیں اور نہ دوبارہ پیدا کریں گے۔
قُلْ اِنْ ضَلَلْتُ فَاِنَّمَآ اَضِلُّ عَلٰى نَفْسِىْ ۖ وَاِنِ اهْتَدَيْتُ فَبِمَا يُوْحِىٓ اِلَىَّ رَبِّىْ ۚ اِنَّهٝ سَـمِيْـعٌ قَرِيْبٌ (50)
کہہ دو اگر میں غلط راستہ پر ہوں تو میری غلطی کا وبال مجھ ہی پر ہوگا، اور اگر میں سیدھی راہ پر ہوں تو اس لیے کہ میرا رب میری طرف وحی کرتا ہے، بے شک وہ سننے والا قریب ہے۔
وَلَوْ تَـرٰٓى اِذْ فَزِعُوْا فَلَا فَوْتَ وَاُخِذُوْا مِنْ مَّكَانٍ قَرِيْبٍ (51)
اور کاش آپ دیکھیں جب کہ وہ گھبرائے ہوئے ہوں گے پس نہ بچ سکیں گے اور پاس ہی سے پکڑ لیے جائیں گے۔
وَقَالُوٓا اٰمَنَّا بِهٖۚ وَاَنّـٰى لَـهُـمُ التَّنَاوُشُ مِنْ مَّكَانٍ بَعِيْدٍ (52)
اور کہیں گے ہم اس (قرآن) پر ایمان لے آئے ہیں، اور اتنی دور سے (ایمان کا) ان کے ہاتھ آنا کہاں ممکن ہے۔
وَقَدْ كَفَرُوْا بِهٖ مِنْ قَبْلُ ۚ وَيَقْذِفُوْنَ بِالْغَيْبِ مِنْ مَّكَانٍ بَعِيْدٍ (53)
حالانکہ پہلے تو اس کا انکار کرتے رہے، اور بے تحقیق باتیں دور ہی دور سے ہانکا کرتے تھے۔
وَحِيْلَ بَيْنَـهُـمْ وَبَيْنَ مَا يَشْتَهُوْنَ كَمَا فُعِلَ بِاَشْيَاعِهِـمْ مِّنْ قَبْلُ ۚ اِنَّـهُـمْ كَانُـوْا فِىْ شَكٍّ مُّرِيْبٍ (54)
اور ان میں اور ان کی خواہش میں آڑ کر دی جائے گی جیسا کہ ان کے ہم خیال لوگوں کے ساتھ اس سے پہلے کیا گیا، بے شک وہ بھی حیرت انگیز شک میں پڑے ہوئے تھے۔