قرآن حکیم            

مکمل سورت
سورت نمبر
آیت نمبر
ایک آیت
(15) سورۃ الحجر (مکی، آیات 99)
بِسْمِ اللّـٰهِ الرَّحْـمٰنِ الرَّحِيْـمِ
الٓـرٰ ۚ تِلْكَ اٰيَاتُ الْكِتَابِ وَقُرْاٰنٍ مُّبِيْنٍ (1)
ا ل ر، یہ آیتیں کتاب کی ہیں اور قرآن واضح کی۔
رُّبَمَا يَوَدُّ الَّـذِيْنَ كَفَرُوْا لَوْ كَانُـوْا مُسْلِمِيْنَ (2)
کافر بڑی حسرت کریں گے کہ کاش وہ مسلمان ہو جاتے۔
ذَرْهُـمْ يَاْكُلُوْا وَيَتَمَتَّعُوْا وَيُلْهِهِـمُ الْاَمَلُ ۖ فَسَوْفَ يَعْلَمُوْنَ (3)
انہیں چھوڑ دو کھا لیں اور فائدہ اٹھا لیں اور انہیں آرزو بھلائے رکھے، سو آئندہ معلوم کر لیں گے۔
وَمَآ اَهْلَكْنَا مِنْ قَرْيَةٍ اِلَّا وَلَـهَا كِتَابٌ مَّعْلُوْمٌ (4)
اور ہم نے جتنی بستیاں ہلاک کی ہیں ان سب کے لیے ایک مقرر وقت لکھا ہوا تھا۔
مَّا تَسْبِقُ مِنْ اُمَّةٍ اَجَلَـهَا وَمَا يَسْتَاْخِرُوْنَ (5)
کوئی قوم اپنے وقت مقرر سے نہ پہلے ہلاک ہوئی ہے نہ پیچھے رہی ہے۔
وَقَالُوْا يَآ اَيُّـهَا الَّـذِىْ نُزِّلَ عَلَيْهِ الـذِّكْرُ اِنَّكَ لَمَجْنُـوْنٌ (6)
اور انہوں نے کہا اے وہ شخص جس پر قرآن نازل کیا گیا ہے بے شک تو مجنون ہے۔
لَّوْ مَا تَاْتِيْنَا بِالْمَلَآئِكَـةِ اِنْ كُنْتَ مِنَ الصَّادِقِيْنَ (7)
اگر تم سچے ہو تو ہمارے پاس فرشتوں کو کیوں نہیں لاتے۔
مَا نُنَزِّلُ الْمَلَآئِكَـةَ اِلَّا بِالْحَقِّ وَمَا كَانُـوٓا اِذًا مُّنْظَرِيْنَ (8)
ہم فرشتہ تو فیصلہ ہی کے لیے بھیجا کرتے ہیں اور اس وقت انہیں مہلت نہیں ملے گی۔
اِنَّا نَحْنُ نَزَّلْنَا الـذِّكْـرَ وَاِنَّا لَـهٝ لَحَافِظُوْنَ (9)
ہم نے یہ نصیحت اتار دی ہے اور بے شک ہم اس کے نگہبان ہیں۔
وَلَقَدْ اَرْسَلْنَا مِنْ قَبْلِكَ فِىْ شِيَـعِ الْاَوَّلِيْنَ (10)
اور تجھ سے پہلے ہم پہلی قوموں میں بھی رسول بھیج چکے ہیں۔
وَمَا يَاْتِيْـهِـمْ مِّنْ رَّسُوْلٍ اِلَّا كَانُـوْا بِهٖ يَسْتَـهْـزِئُـوْنَ (11)
اور وہ بھی جب کوئی رسول ان کے پاس آتا ہے تو اس سے ٹھٹھا ہی کرتے۔
كَذٰلِكَ نَسْلُكُهٝ فِىْ قُلُوْبِ الْمُجْرِمِيْنَ (12)
اسی طرح ہم یہ ٹھٹھا ان مجرموں کے دلوں میں ڈال دیتے ہیں۔
لَا يُؤْمِنُـوْنَ بِهٖ ۖ وَقَدْ خَلَتْ سُنَّـةُ الْاَوَّلِيْنَ (13)
یہ لوگ قرآن پر ایمان نہیں لاتے، اور یہ پہلوں کا دستور چلا آیا ہے۔
وَلَوْ فَتَحْنَا عَلَيْـهِـمْ بَابًا مِّنَ السَّمَآءِ فَظَلُّوْا فِيْهِ يَعْرُجُوْنَ (14)
اور اگر ہم ان پر آسمان سے دروازہ کھول دیں پھر اس میں سے چڑھ جائیں۔
لَقَالُـوٓا اِنَّمَا سُكِّـرَتْ اَبْصَارُنَا بَلْ نَحْنُ قَوْمٌ مَّسْحُوْرُوْنَ (15)
البتہ کہیں گے کہ ہماری نظر بندی کر دی گئی تھی بلکہ ہم پر جادو کیا گیا ہے۔
وَلَقَدْ جَعَلْنَا فِى السَّمَآءِ بُـرُوْجًا وَّزَيَّنَّاهَا لِلنَّاظِرِيْنَ (16)
اور البتہ تحقیق ہم نے آسمان پر برج بنائے ہیں اور دیکھنے والوں کی نظر میں اسے رونق دی ہے۔
وَحَفِظْنَاهَا مِنْ كُلِّ شَيْطَانٍ رَّجِيْـمٍ (17)
اور ہم نے اسے ہر شیطان مردود سے محفوظ رکھا۔
اِلَّا مَنِ اسْتَـرَقَ السَّمْعَ فَاَتْبَعَهٝ شِهَابٌ مُّبِيْنٌ (18)
مگر جس نے چوری سے سن لیا تو اس کے پیچھے چمکتا ہوا انگارہ پڑا۔
وَالْاَرْضَ مَدَدْنَاهَا وَاَلْقَيْنَا فِيْـهَا رَوَاسِىَ وَاَنْبَتْنَا فِيْـهَا مِنْ كُلِّ شَىْءٍ مَّوْزُوْنٍ (19)
اور ہم نے زمین کو پھیلایا اور اس پر پہاڑ رکھ دیے اوراس میں ہر چیز اندازے سے اگائی۔
وَجَعَلْنَا لَكُمْ فِيْـهَا مَعَايِشَ وَمَنْ لَّسْتُـمْ لَـهٝ بِرَازِقِيْنَ (20)
اور اس میں تمہارے لیے روزی کے اسباب بنا دیے اور ان کے لیے بھی جنہیں تم روزی دینے والے نہیں ہو۔
وَاِنْ مِّنْ شَىْءٍ اِلَّا عِنْدَنَا خَزَآئِنُهٝ ۖ وَمَا نُنَزِّلُـهٝٓ اِلَّا بِقَدَرٍ مَّعْلُوْمٍ (21)
اور ہر چیز کے ہمارے پاس خزانے ہیں، اور ہم صرف اسے معین مقدار پر نازل کرتے ہیں۔
وَاَرْسَلْنَا الرِّيَاحَ لَوَاقِحَ فَاَنْزَلْنَا مِنَ السَّمَآءِ مَآءً فَاَسْقَيْنَاكُمُوْهُۚ وَمَآ اَنْتُـمْ لَـهٝ بِخَازِنِيْنَ (22)
اور ہم نے بادل اٹھانے والی ہوائیں بھیجیں پھر ہم نے آسمان سے پانی نازل کیا پھر وہ تمہیں پلایا، اور تمہارے پاس اس کا خزانہ نہیں ہے۔
وَاِنَّا لَنَحْنُ نُحْيِىْ وَنُمِيْتُ وَنَحْنُ الْوَارِثُوْنَ (23)
اور بے شک ہم ہی زندہ کرتے اور مارتے ہیں اور اخیر مالک بھی ہم ہی ہیں۔
وَلَقَدْ عَلِمْنَا الْمُسْتَقْدِمِيْنَ مِنْكُمْ وَلَقَدْ عَلِمْنَا الْمُسْتَاْخِرِيْنَ (24)
اور ہمیں تم میں سے اگلے اور پچھلے سب معلوم کرلیں۔
وَاِنَّ رَبَّكَ هُوَ يَحْشُرُهُـمْ ۚ اِنَّهٝ حَكِـيْـمٌ عَلِيْـمٌ (25)
اور بے شک تیرا رب ہی انہیں جمع کرے گا، بے شک وہ حکمت والا خبردار ہے۔
وَلَقَدْ خَلَقْنَا الْاِنْسَانَ مِنْ صَلْصَالٍ مِّنْ حَـمَاٍ مَّسْنُونٍ (26)
اور البتہ تحقیق ہم نے انسان کو بجتی ہوئی مٹی سے جو سڑے ہوئے گارے سے تھی پیدا کیا۔
وَالْجَآنَّ خَلَقْنَاهُ مِنْ قَبْلُ مِنْ نَّارِ السَّمُوْمِ (27)
اور ہم نے اس سے پہلے جنوں کو آگ کے شعلے سے بنایا تھا۔
وَاِذْ قَالَ رَبُّكَ لِلْمَلَآئِكَـةِ اِنِّـىْ خَالِقٌ بَشَـرًا مِّنْ صَلْصَالٍ مِّنْ حَـمَاٍ مَّسْنُـوْنٍ (28)
اور جب تیرے رب نے فرشتوں سے کہا کہ میں ایک بشر کو پیدا کرنے والا ہوں بجتی ہوئی مٹی سے جو کہ سڑے ہوئے گارے کی ہوگی۔
فَاِذَا سَوَّيْتُهٝ وَنَفَخْتُ فِيْهِ مِنْ رُّوْحِىْ فَقَعُوْا لَـهٝ سَاجِدِيْنَ (29)
پھر جب میں اسے ٹھیک بنالوں اور اس میں اپنی روح پھونک دوں تو تم اس کے آگے سجدہ میں گر پڑنا۔
فَسَجَدَ الْمَلَآئِكَـةُ كُلُّهُـمْ اَجْـمَعُوْنَ (30)
پھر سب کے سب فرشتوں نے سجدہ کیا۔
اِلَّآ اِبْلِيْسَ اَبٰى اَنْ يَّكُـوْنَ مَعَ السَّاجِدِيْنَ (31)
مگر ابلیس نے انکار کیا کہ سجدہ کرنے والوں کے ساتھ ہو۔
قَالَ يَآ اِبْلِيْسُ مَا لَكَ اَلَّا تَكُـوْنَ مَعَ السَّاجِدِيْنَ (32)
فرمایا اے ابلیس! تجھے کیا ہوا کہ سجدہ کرنے والوں کے ساتھ نہ ہوا۔
قَالَ لَمْ اَكُنْ لِّاَسْجُدَ لِـبَشَـرٍ خَلَقْتَهٝ مِنْ صَلْصَالٍ مِّنْ حَـمَاٍ مَّسْنُـوْنٍ (33)
کہا میں ایسا نہ تھا کہ ایک ایسے بشر کو سجدہ کروں جسے تو نے پیدا کیا ہے بجتی ہوئی مٹی سے جو سڑے ہوئے گارے کی تھی۔
قَالَ فَاخْرُجْ مِنْـهَا فَاِنَّكَ رَجِيْـمٌ (34)
کہا تو آسمان سے نکل جا بے شک تو مردود ہو گیا۔
وَاِنَّ عَلَيْكَ اللَّعْنَـةَ اِلٰى يَوْمِ الدِّيْنِ (35)
اور بے شک تجھ پر قیامت کے دن تک لعنت رہے گی۔
قَالَ رَبِّ فَاَنْظِرْنِـىٓ اِلٰى يَوْمِ يُبْعَثُـوْنَ (36)
کہا اے میرے رب! تو پھر مجھے قیامت کے دن تک مہلت دے۔
قَالَ فَاِنَّكَ مِنَ الْمُنْظَرِيْنَ (37)
فرمایا بے شک تجھے مہلت ہے۔
اِلٰى يَوْمِ الْوَقْتِ الْمَعْلُوْمِ (38)
وقت معلوم کے دن تک۔
قَالَ رَبِّ بِمَآ اَغْوَيْتَنِىْ لَاُزَيِّنَنَّ لَـهُـمْ فِى الْاَرْضِ وَلَاُغْوِيَنَّـهُـمْ اَجْـمَعِيْنَ (39)
کہا اے میرے رب! جیسا تو نے مجھے گمراہ کیا ہے البتہ ضرور ضرور میں زمین میں انہیں ان کے گناہوں کو مرغوب کر کے دکھاؤں گا اور ان سب کو گمراہ کروں گا۔
اِلَّا عِبَادَكَ مِنْـهُـمُ الْمُخْلَصِيْنَ (40)
سوائے تیرے ان بندوں کے جو ان میں مخلص ہوں گے۔
قَالَ هٰذَا صِرَاطٌ عَلَىَّ مُسْتَقِيْـمٌ (41)
فرمایا یہ راستہ مجھ پر سیدھا ہے۔
اِنَّ عِبَادِىْ لَيْسَ لَكَ عَلَيْـهِـمْ سُلْطَانٌ اِلَّا مَنِ اتَّبَعَكَ مِنَ الْغَاوِيْنَ (42)
بے شک میرے بندوں پر تیرا کچھ بھی بس نہیں چلے گا مگر جو گمراہوں میں سے تیرا تابعدار ہوا۔
وَاِنَّ جَهَنَّـمَ لَمَوْعِدُهُـمْ اَجْـمَعِيْنَ (43)
اور بے شک ان سب کا وعدہ دوزخ پر ہے۔
لَـهَا سَبْعَةُ اَبْوَابٍۖ لِّكُلِّ بَابٍ مِّنْـهُـمْ جُزْءٌ مَّقْسُوْمٌ (44)
اس کے سات دروازے ہیں، ہر دروازے کے لیے ان کے الگ الگ حصے ہیں۔
اِنَّ الْمُتَّقِيْنَ فِىْ جَنَّاتٍ وَّعُيُوْنٍ (45)
بے شک پرہیزگار باغوں اور چشموں میں رہیں گے۔
اُدْخُلُوْهَا بِسَلَامٍ اٰمِنِيْنَ (46)
ان باغوں میں سلامتی اور امن سے جا کر رہو۔
وَنَزَعْنَا مَا فِىْ صُدُوْرِهِـمْ مِّنْ غِلٍّ اِخْوَانًا عَلٰى سُرُرٍ مُّتَقَابِلِيْنَ (47)
اور ان کے دلوں میں جو کینہ تھا ہم وہ سب دور کر دیں گے سب بھائی بھائی ہوں گے تختوں پر آمنے سامنے بیٹھنے والے ہوں گے۔
لَا يَمَسُّهُـمْ فِيْـهَا نَصَبٌ وَّمَا هُـمْ مِّنْـهَا بِمُخْرَجِيْنَ (48)
انہیں وہاں کوئی تکلیف نہیں پہنچے گی اور نہ وہ وہاں سے نکالے جائیں گے۔
نَبِّئْ عِبَادِىٓ اَنِّـىٓ اَنَا الْغَفُوْرُ الرَّحِيْـمُ (49)
میرے بندوں کو اطلاع دے کہ بےشک میں بخشنے والا مہربان ہوں۔
وَاَنَّ عَذَابِىْ هُوَ الْعَذَابُ الْاَلِيْـمُ (50)
اور بے شک میرا عذاب وہی دردناک عذاب ہے۔
وَنَبِّئْهُـمْ عَنْ ضَيْفِ اِبْـرَاهِيْـمَ (51)
اور انہیں ابراہیم کے مہمانوں کا حال سنا دو۔
اِذْ دَخَلُوْا عَلَيْهِ فَقَالُوْا سَلَامًا ۖ قَالَ اِنَّا مِنْكُمْ وَجِلُوْنَ (52)
جب اس کے گھر میں داخل ہوئے اور کہا سلام، اس نے کہا بے شک ہمیں تم سے ڈر معلوم ہوتا ہے۔
قَالُوْا لَا تَوْجَلْ اِنَّا نُـبَشِّرُكَ بِغُلَامٍ عَلِيْـمٍ (53)
کہا ڈرو مت بے شک ہم تمہیں ایک لڑکے کی خوشخبری سناتے ہیں جو بڑا عالم ہوگا۔
قَالَ اَبَشَّرْتُمُوْنِىْ عَلٰٓى اَنْ مَّسَّنِىَ الْكِبَـرُ فَبِـمَ تُـبَشِّـرُوْنَ (54)
کہا مجھے اب بڑھاپے میں خوشخبری سناتے ہو، سو کس چیز کی خوشخبری سناتے ہو۔
قَالُوْا بَشَّرْنَاكَ بِالْحَقِّ فَلَا تَكُنْ مِّنَ الْقَانِطِيْنَ (55)
انہوں نے کہا ہم نے تمہیں سچی خوشخبری سنائی ہے سو تو نا امید نہ ہو۔
قَالَ وَمَنْ يَّقْنَطُ مِنْ رَّحْـمَةِ رَبِّهٓ ٖ اِلَّا الضَّآلُّوْنَ (56)
کہا اپنے رب کی رحمت سے نا امید تو گمراہ لوگ ہی ہوا کرتے ہیں۔
قَالَ فَمَا خَطْبُكُمْ اَيُّـهَا الْمُرْسَلُوْنَ (57)
کہا اے فرشتو! پھر تمہارا کیا مقصد ہے۔
قَالُـوٓا اِنَّـآ اُرْسِلْنَـآ اِلٰى قَوْمٍ مُّجْرِمِيْنَ (58)
انہوں نے کہا ہم ایک نافرمان قوم کی طرف بھیجے گئے ہیں۔
اِلَّآ اٰلَ لُوْطٍۖ اِنَّا لَمُنَجُّوْهُـمْ اَجْـمَعِيْنَ (59)
مگر لوط کے گھر والے کہ ہم ان سب کو بچا لیں گے۔
اِلَّا امْرَاَتَهٝ قَدَّرْنَـآ اِنَّـهَا لَمِنَ الْغَابِـرِيْنَ (60)
مگر اس کی بیوی کو، ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ پیچھے رہنے والوں میں سے ہے۔
فَلَمَّا جَآءَ اٰلَ لُوْطِ  ِۨ الْمُرْسَلُوْنَ (61)
پھر جب لوط کے گھر فرشتے پہنچے۔
قَالَ اِنَّكُمْ قَوْمٌ مُّنْكَـرُوْنَ (62)
کہا بے شک تم اجنبی لوگ ہو۔
قَالُوْا بَلْ جِئْنَاكَ بِمَا كَانُـوْا فِيْهِ يَمْتَـرُوْنَ (63)
انہوں نے کہا بلکہ ہم تیرے پاس وہ چیز لے کر آئے ہیں جس میں وہ جھگڑتے تھے۔
وَاَتَيْنَاكَ بِالْحَقِّ وَاِنَّا لَصَادِقُوْنَ (64)
اور ہم تیرے پاس پکی بات لائے ہیں اور بے شک ہم سچ کہتے ہیں۔
فَاَسْرِ بِاَهْلِكَ بِقِطْـعٍ مِّنَ اللَّيْلِ وَاتَّبِــعْ اَدْبَارَهُـمْ وَلَا يَلْتَفِتْ مِنْكُمْ اَحَدٌ وَّامْضُوْا حَيْثُ تُؤْمَرُوْنَ (65)
پس تم اپنے گھر والوں کو کچھ رات رہے لے نکلو اور تو ان کے پیچھے چل اور تم میں سے کوئی مڑ کر نہ دیکھے اور چلے جاؤ جہاں تمہیں حکم ہے۔
وَقَضَيْنَـآ اِلَيْهِ ذٰلِكَ الْاَمْرَ اَنَّ دَابِرَ هٰٓؤُلَآءِ مَقْطُوْعٌ مُّصْبِحِيْنَ (66)
اور ہم نے لوط کو قطعی طور پر یہ بات واضح کر دی تھی کہ صبح ہوتے ہی ان کی جڑ کاٹ دی جائے گی۔
وَجَآءَ اَهْلُ الْمَدِيْنَةِ يَسْتَبْشِرُوْنَ (67)
اور شہر والے خوشیاں کرتے ہوئے آئے۔
قَالَ اِنَّ هٰٓؤُلَآءِ ضَيْفِىْ فَلَا تَفْضَحُوْنِ (68)
لوط نے کہا یہ لوگ میرے مہمان ہیں سو مجھے ذلیل نہ کرو۔
وَاتَّقُوا اللّـٰهَ وَلَا تُخْزُوْنِ (69)
اور اللہ سے ڈرو اور مجھے بے آبرو نہ کرو۔
قَالُـوٓا اَوَلَمْ نَنْـهَكَ عَنِ الْعَالَمِيْنَ (70)
انہوں نے کہا کیا ہم نے تمہیں دنیا بھر کی حمایت سے منع نہیں کیا ہے۔
قَالَ هٰٓؤُلَآءِ بَنَاتِـىٓ اِنْ كُنْتُـمْ فَاعِلِيْنَ (71)
کہا یہ میری بیٹیاں حاضر ہیں اگر تم کرنے والے ہو۔
لَعَمْرُكَ اِنَّـهُـمْ لَفِىْ سَكْـرَتِـهِـمْ يَعْمَهُوْنَ (72)
تیری جان کی قسم ہے وہ اپنی مستی میں اندھے ہو رہے تھے۔
فَاَخَذَتْـهُـمُ الصَّيْحَةُ مُشْـرِقِيْنَ (73)
پھر دن نکلتے ہی انہیں ہولناک آواز نے آ لیا۔
فَجَعَلْنَا عَالِيَـهَا سَافِلَـهَا وَاَمْطَرْنَا عَلَيْـهِـمْ حِجَارَةً مِّنْ سِجِّيْلٍ (74)
پھر ہم نے ان بستیوں کو زیر و زبر کر دیا اور ان پر کنکر کے پتھر برسائے۔
اِنَّ فِىْ ذٰلِكَ لَاٰيَاتٍ لِّلْمُتَوَسِّـمِيْنَ (75)
بے شک اس واقعہ میں اہلِ بصیرت کے لیے نشانیاں ہیں۔
وَاِنَّـهَا لَبِسَبِيْلٍ مُّقِيْـمٍ (76)
اور بے شک یہ بستیاں سیدھے راستے پر واقع ہیں۔
اِنَّ فِىْ ذٰلِكَ لَاٰيَةً لِّلْمُؤْمِنِيْنَ (77)
بے شک اس میں ایمانداروں کے لیے نشانیاں ہیں۔
وَاِنْ كَانَ اَصْحَابُ الْاَيْكَـةِ لَظَالِمِيْنَ (78)
اور بن کے لوگ بھی بدکار تھے۔
فَانْتَقَمْنَا مِنْـهُـمْ وَاِنَّـهُمَا لَبِاِمَامٍ مُّبِيْنٍ (79)
پھر ہم نے ان سے بھی بدلہ لیا اور یہ دونوں بستیاں کھلے راستہ پر واقع ہیں۔
وَلَقَدْ كَذَّبَ اَصْحَابُ الْحِجْرِ الْمُرْسَلِيْنَ (80)
اور بے شک حجر والوں نے رسولوں کو جھٹلایا تھا۔
وَاٰتَيْنَاهُـمْ اٰيَاتِنَا فَكَانُـوْا عَنْـهَا مُعْرِضِيْنَ (81)
اور ہم نے انہیں اپنی نشانیاں بھی دی تھیں پر وہ ان سے روگردانی کرتے تھے۔
وَكَانُـوْا يَنْحِتُـوْنَ مِنَ الْجِبَالِ بُيُوْتًا اٰمِنِيْنَ (82)
اور وہ لوگ پہاڑوں کو تراش کر گھر بناتے تھے کہ امن میں رہیں۔
فَاَخَذَتْـهُـمُ الصَّيْحَةُ مُصْبِحِيْنَ (83)
پھر انہیں صبح کے وقت سخت آواز نے آ پکڑا۔
فَمَآ اَغْنٰى عَنْـهُـمْ مَّا كَانُـوْا يَكْسِبُوْنَ (84)
پھر ان کے دنیاوی ہنر ان کے کچھ بھی کام نہ آئے۔
وَمَا خَلَقْنَا السَّمَاوَاتِ وَالْاَرْضَ وَمَا بَيْنَـهُمَآ اِلَّا بِالْحَقِّ ۗ وَاِنَّ السَّاعَةَ لَاٰتِيَةٌ ۖ فَاصْفَحِ الصَّفْحَ الْجَـمِيْلَ (85)
اور ہم نے آسمانوں اور زمین اور ان کی درمیانی چیزوں کو بغیر حکمت کے پیدا نہیں کیا، اور قیامت ضرور آنے والی ہے، پر تو ان سے خوش خلقی کے ساتھ کنارہ کر۔
اِنَّ رَبَّكَ هُوَ الْخَلَّاقُ الْعَلِيْـمُ (86)
بے شک تیرا رب وہی پیدا کرنے والا جاننے والا ہے۔
وَلَقَدْ اٰتَيْنَاكَ سَبْعًا مِّنَ الْمَثَانِىْ وَالْقُرْاٰنَ الْعَظِيْـمَ (87)
اور ہم نے تمہیں سات آیتیں دیں جو (نماز میں) دہرائی جاتی ہیں اور قرآن عظمت والا دیا۔
لَا تَمُدَّنَّ عَيْنَيْكَ اِلٰى مَا مَتَّعْنَا بِهٓ ٖ اَزْوَاجًا مِّنْـهُـمْ وَلَا تَحْزَنْ عَلَيْـهِـمْ وَاخْفِضْ جَنَاحَكَ لِلْمُؤْمِنِيْنَ (88)
اور تو اپنی آنکھ اٹھا کر بھی ان چیزوں کو نہ دیکھ جو ہم نے مختلف قسم کے کافروں کو استعمال کے لیے دے رکھی ہیں اور ان پر غم نہ کر اور اپنے بازو ایمان والوں کے لیے جھکا دے۔
وَقُلْ اِنِّـىٓ اَنَا النَّذِيْـرُ الْمُبِيْنُ (89)
اور کہہ دو بے شک میں کھلم کھلا ڈرانے والا ہوں۔
كَمَآ اَنْزَلْنَا عَلَى الْمُقْتَسِمِيْنَ (90)
جیسا ہم نے (عذاب) ان بانٹنے والوں پر بھیجا ہے۔
اَلَّـذِيْنَ جَعَلُوا الْقُرْاٰنَ عِضِيْنَ (91)
جنہوں نے قرآن کو ٹکڑے ٹکڑے کیا ہے۔
فَوَرَبِّكَ لَنَسْاَلَنَّـهُـمْ اَجْـمَعِيْنَ (92)
پھر تیرے رب کی قسم ہے البتہ ہم ان سب سے سوال کریں گے۔
عَمَّا كَانُـوْا يَعْمَلُوْنَ (93)
اس چیز سے کہ وہ کرتے تھے۔
فَاصْدَعْ بِمَا تُؤْمَرُ وَاَعْرِضْ عَنِ الْمُشْرِكِيْنَ (94)
سو تو کھول کر سنا دے جو تجھے حکم دیا گیا ہے اور مشرکوں کی پروا نہ کر۔
اِنَّا كَفَيْنَاكَ الْمُسْتَـهْزِئِيْنَ (95)
بے شک ہم تیری طرف سے ٹھٹھا کرنے والوں کے لیے کافی ہیں۔
اَلَّـذِيْنَ يَجْعَلُوْنَ مَعَ اللّـٰهِ اِلٰـهًا اٰخَرَ ۚ فَسَوْفَ يَعْلَمُوْنَ (96)
اور جو اللہ کے ساتھ دوسرا خدا مقرر کرتے ہیں سو عنقریب معلوم کر لیں گے۔
وَلَقَدْ نَعْلَمُ اَنَّكَ يَضِيْقُ صَدْرُكَ بِمَا يَقُوْلُوْنَ (97)
اور ہم جانتے ہیں کہ تیرا دل ان باتوں سے تنگ ہوتا ہے جو وہ کہتے ہیں۔
فَسَبِّـحْ بِحَـمْدِ رَبِّكَ وَكُنْ مِّنَ السَّاجِدِيْنَ (98)
سو تو اپنے رب کی تسبیح حمد کے ساتھ کیے جا اور سجدہ کرنے والوں میں سے ہو۔
وَاعْبُدْ رَبَّكَ حَتّـٰى يَاْتِيَكَ الْيَقِيْنُ (99)
اور اپنے رب کی عبادت کرتے رہو یہاں تک کہ تمہیں موت آجائے۔